بڑی پیشرفت، پاکستان کی زمینی راستے سے روس کو پھلوں کی ترسیل شروع

پاکستان سے سنگترے کے سولہ ٹرک روسی شہروں ڈربنٹ اور گروزنی میں داخل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

پاکستان کے سرکاری میڈیا نے پیر کو رپورٹ کیا کہ پاکستان نے زمینی راستے سے روس تک پھلوں کی نقل و حمل شروع کر کے علاقائی تجارت میں ایک سنگِ میل حاصل کیا ہے۔

اس سلسلے میں پاکستان کی نیشنل لاجسٹک کارپوریشن (این ایل سی) کے 16 ٹرک سنگترے لے کر تقریباً 6 ہزار کلومیٹر کا فاصلہ طے کرنے کے بعد روسی شہروں ڈربنٹ اور گروزنی میں داخل ہو گئے۔

سرکاری نشریاتی ادارے ریڈیو پاکستان نے کہا، "روس نے دونوں ممالک کے درمیان دو طرفہ تجارت کے فروغ کے لیے این ایل سی کی کوششوں کو سراہا۔"

پاکستان جو گذشتہ دو سالوں سے معاشی سست روی کا شکار ہے، اس وقت کئی ممالک کے ساتھ دوطرفہ تجارت کو وسعت دینے کی کوششیں کر رہا ہے۔

جنوبی ایشیائی ملک اپنے کم ہوتے زرِ مبادلہ کے ذخائر اور غیر مستحکم کرنسی کو مضبوط بنانے کے لیے بیرونی سرمایہ کاری کو بالخصوص شرقِ اوسط سے راغب کرنے کے لیے کوشاں ہے۔

روس کو پھلوں کی برآمد سے پہلے این ایل سی نے وسطی ایشیائی ریاستوں اور چین کو بھی کیلے، گوشت اور سمندری غذا کی برآمد کے لیے لاجسٹک سپورٹ فراہم کی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں