پاکستان میں قرآن پاک کے اوراق نذر آتش کرنے والی خاتون کو عمر قید کی سزا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان کی ایک عدالت نے قرآن پاک کے صفحات نذر آتش کرنے کے جرم میں ایک خاتون کو عمر قید کی سزا سنا دی ہے۔ پاکستان میں انسداد توہین مذہب کے قانون کے تحت قرآن پاک، دین اسلام اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی توہین کرنے والے کو سزائے موت تک دی جا سکتی ہے۔ تاہم ابھی کسی کو سزائے موت دی نہیں گئی ہے۔

حکومتی پراسیکیوٹر مہذب اویس کے مطابق آسیہ بی بی نامی خاتون کو 2021 میں قرآن پاک کے اوراق جلانے پر گرفتار کیا گیا تھا۔ اس بارے میں عدالت نے اب فیصلہ کیا ہے۔ عدالت کا یہ فیصلہ لاہور میں سنایا گیا ہے۔

پراسیکیوٹر کے مطابق سزا پانے والی خاتون نے صحت جرم سے انکار کیا ہے۔ تاہم عدالتی سزا کے خلاف وہ اب اپیل کر سکے گی۔ آسیہ بی بی نام کی ایک عیسائی خاتون کو 2019 میں توہین رسالت کے جرم میں سزا سنائی گئی تھی۔ تاہم بعد ازاں اس کو رہا کر کے کینیڈا بھجوا دیا گیا۔

پاکستان کی اکثریت توہین رسالت کے خلاف قوانین کی حامی ہے اور توہین رسالت کے مرتکب افراد کو سخت سے سخت سزا دینے کی حمائت کرتی ہے۔ تاہم مغربی دنیا جہاں پر توہین قرآن اور توہین رسالت کے واقعات گاہے گاہے پیش آتے رہتے ہیں، پاکستان میں ان قوانین کے خلاف مؤقف رکھتے ہیں اور مغربی حمایت یافتہ این جی اوز بھی پاکستان کے قوانین کو سخت قرار دیتی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں