وزیراعظم شہباز شریف کے دورہ چین کی تیاریاں تیز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

پاکستان نے وزیراعظم شہباز شریف کے دورہ چین کی تیاریوں کو تیز کر دیا ہے۔ اس امر کی اطلاع جمعہ کے روز پاکستان کی وزارت خارجہ نے دی ہے۔ وزیراعظم شہباز شریف کا یہ دورہ ماہ مئی کے آغاز میں ہوگا۔ تاکہ سی پیک کے سلسلے میں قائم دو طرفہ جوائنٹ کوآپریشن کمیٹی کے تیرھویں اجلاس میں شرکت کر سکیں۔

پاکستانی وزارت خارجہ کی طرف سے یہ اطلاع وزیراعظم شہباز شریف اور وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی احسن اقبال کی ایک ملاقات کے بعد دی ہے۔ بتایا گیا ہے کہ یہ ملاقات وزیراعظم کے دورہ چین کی تیاری کے سلسلے میں تھی۔ شہباز شریف ماہ مئی میں بیجنگ جانے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ جہاں وہ سی پیک کے سلسلے میں دو طرفہ اعتماد کی بحالی اور زمین پر جاری پیش رفت کے بارے میں اپنے چینی ہم منصب اور دوسرے حکام کے ساتھ تبادلہ خیال کریں گے۔

پاکستانی وزارت منصوبہ بندی کا قلمدان رکھنے والے وزیر احسن اقبال کا کہنا ہے کہ وزیراعظم شہباز شریف کا یہ دورہ غیر معمولی اہمیت کا حامل ہے۔ کیونکہ یہ دورہ دو طرفہ جوائنٹ کوآپریشن کمیٹی کے تیرھویں اجلاس کے تناظر میں ہو رہا ہے۔ احسن اقبال نے کہا 'سی پیک' منصوبے میں پانچ نئی تجارتی راہداریاں قائم کی جا رہی ہیں۔ امکان ہے کہ وزیراعظم کے اس دورے کے نتیجے میں 'سی پیک' کی سرگرمیوں کو تیزی سے آگے بڑھانے کی رفتار مزید بہتر ہوگی۔'

خیال رہے چین پاکستان میں 'سی پیک' کے سلسلے میں توانائی منصوبوں کے انفراسٹرکچر پر 65 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کر رہا ہے۔ چین کے 'بیلٹ اینڈ روڈ' منصوبے کے لیے یہ پاکستان میں ایک بڑی انویسٹمنٹ ہے۔ پاکستان میں سڑکوں اور ریلوے لائن کی بہتری بھی 'سی پیک' منصوبوں میں خاص اہمیت کی حامل ہے۔

2013 میں جب سے سی پیک شروع ہوا ہے دسیوں ارب ڈالر سی پیک کے تحت پاکستان میں لگائے جا چکے ہیں۔ جبکہ وزیر منصوبہ بندی کے مطابق ' 2013 سے 2018 کے درمیان 25 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری 'سی پیک' کے سلسلے میں ہوئی تھی۔ جس سے ملکی معیشت پر بہت مثبت اثرات مرتب ہوئے تھے۔ حکومت کی کوشش ہے کہ وہ 'سی پیک' ہے تمام منصوبوں کو جلدی سے مکمل کرے۔ تاکہ دونوں ملکوں کے عوام کی خوشحالی و ترقی میں اس منصوبے کا کردار نمایاں ہو سکے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں