دبئی: پاکستانی بچوں کو آسان اور کم اخراجات کے ساتھ ٹیوشن پڑھانے کا پاکستانی سٹارٹ اپ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

کراچی بیسڈ سٹارٹ اپ نے دبئی میں مقیم پاکستانیوں کے بچوں لیے ٹیوشن فراہمی کا سلسلہ شروع کیا ہے۔ ٹیوشن سٹارٹ اپ دبئی کے ماحول کے مطابق تعلیم فراہم کرے گا۔

اس کا بنیادی مقصد بہتر، آسان اور مقابلتاً کم اخراجات کے ساتھ ٹیوشن فراہم کرنا ہے۔ تاکہ دبئی میں مقیم پاکستانیوں کے بچے بھی ٹیوشن لے سکیں۔ ایک اندازے کے مطابق دبئی میں مقیم پاکستانیوں کے تقریباً 20 ہزار بچے سکول نہیں جا رہے ہیں۔

پاکستان ایسوسی ایشن دبئی (پی اے ڈی) کے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے 'کراچی کی سٹارٹ اپ کمپنی کے ساتھ ایم او یو پر ماہ فروری میں دستخط ہوئے ہیں۔ ان کے تعاون سے پاکستانیوں کے 20 ہزار بچوں کو فائدہ پہنچے گا۔'

متحدہ عرب امارات میں رہنے والے پاکستانیوں کو سہولت فراہم کرنے کے لیے 'پاکستان ایسوسی ایشن دبئی' 1963 میں قائم کیا گیا تھا۔

کراچی کا سٹارٹ اپ 'لرن سکول اکیڈمی' گزشتہ چار سالوں سے بیرون ملک رہنے والے پاکستانیوں کے بچوں کو تعلیمی دنیا میں مدد فراہم کر رہا ہے۔ تاکہ ڈیجیٹل سکولنگ کے ذریعے طلبہ کی مدد کی جائے۔

پاکستان ایسوسی ایشن دبئی کے جنرل سیکرٹری زاہد حسین نے جمعہ کے روز بتایا 'اس منصوبے سے شرح خواندگی بڑھانے میں مدد ملے گی۔ ۔نیز سکولوں سے باہر بچوں کی زندگیوں اور صلاحیتوں کو بہتر بنانے میں بھی مفید ثابت ہوگا۔'

زاہد حسین نے مزید بتایا 'لرن سکول اکیڈمی کے ستاھ ہونے والی شراکت داری کے ذریعے ان بچوں کو پڑھانے کا سلسلہ شروع کیا جا رہا ہے جو بچے دبئی کے سکولوں میں تعلیم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔'

لرن سکول اکیڈمی کے سی ای او وہاج کیانی نے کہا 'متحدہ عرب امارات میں پرائیویٹ سکولوں کی فیسیسں بہت زیادہ ہیں۔ جس وجہ سے پاکستانی اپنے بچوں کو سکولوں میں داخل نہیں کرا سکتے ہیں اور بچے تعلیم حاصل نہیں کر پاتے۔ ' پی اے ایڈ' کے ساتھ ہونے والی شراکت داری سے سستی اور قابل رسائی تعلیم فراہم کی جائے گی۔'

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں