پاکستان کے دلکش علاقے چترال میں موسمِ بہارکا قدیم تہوار رسومات اور رقص کے ساتھ اختتام

کالاش تقریباً 4,000 افراد کا ایک گروپ اور ممکنہ طور پر پاکستان کی مختصر ترین اقلیت ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

خیبر پختونخواہ (کے پی) ٹورازم اتھارٹی نے کہا کہ جمعہ کو ملک کے شمالی ضلع چترال میں رہنے والے اقلیتی کالاش لوگوں کے ہاں منایا جانے والا موسمِ بہار کا تہوار اجتماعی رسومات اور گانے اور رقص کے ساتھ اختتام پذیر ہو گیا۔

تقریباً 4,000 افراد پر مشتمل گروپ کالاش ممکنہ طور پر پاکستان کی سب سے چھوٹی اقلیت ہے۔ یہ لوگ کوہِ ہندوکش کے پہاڑی سلسلے میں رہتے ہیں جہاں وہ ایک قدیم مشرکانہ اور بت پرستانہ عقیدے پر عمل پیرا ہیں۔ ہر سال مئی میں وہ ایک تہوار چلم جوشی کے لیے جمع ہوتے ہیں جو موسم بہار کے ساتھ آتا ہے اور اس میں رقص، جانوروں کی قربانی اور مرد و خواتین کے لیے انتہائی مخصوص کردار ہوتے ہیں۔ کالاش برادری کے مذہب میں فطرت کی پرستش کرنے کے ساتھ ساتھ دیوتاؤں کے مندر کی مظاہر پرستانہ روایات شامل ہیں اور یہ لوگ بنیادی طور پر تین کالاش وادیوں بمبوریت، بیریر اور رمبر میں رہتے ہیں۔

ٹورازم اتھارٹی کے ترجمان محمد سعد نے ایک بیان میں کہا، "ملکی اور غیر ملکی سیاح بہار کی آمد پر منائے جانے والے مذہبی تہوار کے لیے بہت بڑی تعداد میں پہنچے تھے۔ خیبر پختونخوا ٹورازم اتھارٹی کی دیر بالا اور زیریں چترال میں سیاحتی سہولیات میلے کے دوران کھلی رہیں۔"

انہوں نے کہا کہ کالاش قبیلے نے اس تہوار کو نغمات اور رقص کے ساتھ ساتھ دودھ کی تقسیم، نومولود بچوں کے لیے روایتی رقص اور مویشیوں اور فصلوں کی حفاظت کے لیے دعا کی رسومات کے ساتھ منایا۔

پہلے دن لڑکے اور لڑکیاں ڈھول کی تھاپ پر جنگلی پھول اور اخروٹ کے پتے توڑنے کے لیے بلند چراگاہوں میں جاتے ہیں جبکہ دوسرے دن جب دودھ تقسیم کیا جاتا ہے تو بکریوں کے اصطبل کو جنگلی پھولوں اور اخروٹ کے پتوں سے سجایا جاتا ہے اور ہر گاؤں میں گانے اور تقریبات ہوتی ہیں۔

تیسرے دن گاؤں والے جمع ہو کر نوزائیدہ بچوں کے لیے تقریبات میں خشک شہتوت اور اخروٹ تقسیم کرتے ہیں۔ چوتھے دن گھونا تقریب کے دوران کالاش برادری کے گاؤں والے ایک مرکزی مقام پر جمع ہوتے ہیں اور مختلف رسومات اور تقاریب کی جاتی ہیں۔

پورے تہوار کے دوران خواتین عام طور پر شوخ رنگوں کے روایتی لباس زیب تن کرتی ہیں، سونے اور چاندی کے زیورات اور سر کی پوشاک پہنتی ہیں جبکہ مرد اونی واسکٹ کے ساتھ روایتی شلوار قمیض پہنتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں