سعودی ولی عہد کا دورہ پاکستان دوطرفہ تعلقات میں گیم چینجر ثابت ہوگا: وزیر داخلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

وزیر داخلہ محسن نقوی نے ہفتہ کے روز کہا ہے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کا مجوزہ دورہ پاکستان دونوں ملکوں کے تعلقات میں ایک مثبت تبدیلی کا باعث بنتے ہوئے'گیم چینجر' ثابت ہوگا۔ انہوں نے مزید کہا پوری پاکستانی قوم ان کے اس دورے کا بڑی بے چینی سے انتظار کر رہی ہے۔

وزیر داخلہ نے بات سعودی سفارت خانے میں سعودی سفیر نواف بن سعید المالکی سے ملاقات کے دوران کہی۔ پاکستان کی طرف سے تجویز کیے گئے دورے کے بارے میں یہ بیان وزارت داخلہ نے جاری کیا ہے۔

دونوں شخصیات نے دو طرفہ دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا ہے۔ اس موقع پر پاکستان کی طرف سے تجویز کیے گئے ولی عہد کے دورے پر بھی بات چیت کی گئی۔ نیز مختلف شعبوں میں تعاون کے سلسلے میں بھی بات چیت ہوئی۔

نائب وزیراعظم پاکستان اسحاق ڈار نے کہا تھا کہ ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کا دورہ پاکستان زیر غور ہے اور اس بارے میں ماہ مئی کے دوران کسی بھی وقت تاریخ کا تعین کر دیا جائے گا۔ تاہم ابھی تک دونوں ملکوں میں سے کسی نے بھی اس امکانی دورے کی تصدیق نہیں کی ہے۔

پاکستان کے وزیر داخلہ محسن نقوی نے کہا 'دونوں ملکوں کے برادرانہ اور تاریخی تعلقات اب اس مرحلے پر ہیں کہ اب معیشت کے حوالے سے تبدیل ہو رہے ہیں۔'

پاکستان اور سعودی عرب کے تعلقات ہمیشہ سے ہر آزمائش میں آزمائے ہیں۔ ولی عہد نے پچھلے ماہ اس بارے میں تصدیق کی تھی کہ سعودی عرب پاکستان میں اپنے سرمایہ کاری کے ہدف کو 5 ارب ڈالر تک بڑھائے گا۔

واضح رہے سعودی تاجروں کے ایک اعلی سطح کے وفد نائب سعودی سفیر برائے سرمایہ کاری ابراہیم المبارک کے زیر قیادت اسی ماہ پاکستان کا دورہ کیا ہے۔ تاکہ پاکستان میں سرمایہ کاری کے امکانات کا جائزہ لیا جا سکے۔ ان سرمایہ کاری کے خصوصی دلچسپی کے شعبوں میں معدنیات توانائی زراعت اور پٹرولیم بطور خاص شامل ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں