کرغزستان میں پرتشدد واقعات میں پانچ پاکستانی طلبہ زخمی ہوئے: پاکستانی سفارتخانہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستانی حکام نےوسط ایشیائی ملک کرغزستان کے دارالحکومت بشکیک میں غیر ملکی طلبا پر حملوں کے واقعات میں پانچ پاکستانی طلبا کے زخمی ہونے کی تصدیق کی ہے۔

بشکیک میں پاکستانی ایمبسی کے مطابق کرغز وزارت خارجہ نے تصدیق کی ہے کہ غیر ملکی طلبا پر حملے میں کسی پاکستانی کی موت واقع نہیں ہوئی۔ وزارت خارجہ کا کہنا تھا کہ اب صورتحال کنٹرول میں ہے اور پرتشدد واقعات پر قابو پا لیا گیا ہے۔

اس سے قبل کرغز میڈیا کے مطابق 13 مئی کو مقامی اور مصری طلباء کے درمیان ایک لڑائی کے واقعے کی ویڈیو منظر عام پر آنے کے بعد مشتعل ہجوم نے بشکیک میں غیر ملکی طلبا کو تشدد کا نشانہ بنانا شروع کیا جن میں پاکستانی، بھارتی اور بنگلہ دیشی طلبا بھی شامل تھے۔

وزیراعظم پاکستان محمد شہباز شریف نے کرغزستان میں پاکستانی سفیر حسن علی ضیغم سے ٹیلی فونک رابطہ کیا اور کرغزستان میں حالیہ صورتحال میں پاکستانی طلبا کو ہر قسم کی مدد و معاونت فراہم کرنے کی ہدایت کی ہے۔

وزیر اعظم آفس کے پریس ونگ سے جاری بیان کے مطابق وزیرِ اعظم نے پاکستانی سفیر کو خود ہاسٹلز کا دورہ کر کے طلبا ءسے ملاقات کرنے کی ہدایت کی۔

وزیر اعظم نے تاکید کی کہ طلباء کے والدین کے ساتھ مسلسل رابطے میں رہیں اور ان کو بر وقت معلومات فراہم کرتے رہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ زخمی ہونے والے طلباء کی واپسی کے اخراجات حکومت پاکستان برداشت کرے گی۔

طلباء گھروں تک محدود رہیں

وفاقی وزیر برائے اطلاعات و نشریات عطا اللہ تارڑ نے ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ کرغزستان میں پاکستان کے سفیر نے تمام پاکستانیوں کو تاحکم ثانی گھروں میں رہنے کی ہدایت کی ہے۔

حکومت اس سلسلے میں کرغزستان میں پاکستانی سفارت خانہ کے ساتھ رابطہ میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی ہنگامی صورتحال کی صورت میں پاکستانی سفارت خانے سے +996507567667 اور +996555554476 پر رابطہ کیا جاسکتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں