پاکستانی حاجیوں کو غیر معیاری کھانا فراہم کرنے والی چھے کمپنیوں کو جرمانہ

بروقت اور حفظانِ صحت کے مطابق کھانا فراہم کرنے میں ناکامی، 17 سزاؤں میں 263,580 ریال کا جرمانہ کیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

پاکستان حج مشن (پی ایچ ایم) نے مکہ مکرمہ میں چھے کیٹرنگ کمپنیوں پر 263,580 ریال (71,000 ڈالر) مالیت کے 17 جرمانے عائد کیے ہیں۔ ان کمپنیوں سے پاکستانی عازمین کو کھانا فراہم کرنے کا معاہدہ کیا گیا تھا۔

پاکستان حج مشن نے امسال سرکاری سکیم کے تحت حج ادا کرنے والے تقریباً 70,105 عازمین کے کھانے کی ضروریات پورا کرنے کے لیے نو کیٹرنگ کمپنیوں کو ملازمت دی ہے۔

ایسوسی ایٹڈ پریس آف پاکستان (اے پی پی) نے پی ایچ ایم کے حکام کے حوالے سے بتایا، "زیادہ تر جرمانے معاہدے کی بعض شقوں کی خلاف ورزی کرنے اور بلاتعطل فراہمی کے بغیر حاجیوں کو بروقت اور حفظانِ صحت کے مطابق کھانے کی فراہمی کو یقینی بنانے میں ناکامی پر عائد کیے گئے ہیں۔"

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ حفظانِ صحت کے حالات اور کھانے کے معیار پر پی ایچ ایم کے عملے کی گہری نظر ہے اور کھانا بروقت فراہم کیا جا رہا ہے۔

اے پی پی نے کہا کہ کیٹرنگ کمپنیوں کا انتخاب بولی کے ایک مسابقتی اور شفاف عمل کے بعد کیا گیا تاکہ حجاج کو محفوظ ترین اور صحت بخش ترین کھانا فراہم کیا جا سکے: "یہ سخت جانچ پڑتال کھانے کی فراہمی کے ابتدائی مرحلے کا ایک لازمی حصہ ہے جو تیاری کے مکمل عمل کو یقینی بناتا ہے۔"

کھانے کی کمپنیوں کی خدمات حاصل کرنے کا عمل گذشتہ سال نومبر میں وفاقی کابینہ سے اس بات کی منظوری کے بعد شروع کیا گیا تھا کہ معیاری کھانا یومیہ 35 ریال فی شخص کے حساب سے فراہم کیا جائے گا۔

پی ایچ ایم کے عہدیداروں نے بتایا کہ کھانے کے منتظمین اس کی تیاری کے دوران اور کچن کی مسلسل اور چوبیس گھنٹے نگرانی کر رہے تھے۔ جن رہائشی عمارات اور ہوٹلوں میں مشن نے عازمین کو رہائش دی ہوئی ہے، وہاں پہنچنے پر کھانے کے معیار اور مقدار کا دوبارہ جائزہ لیا جاتا تھا۔ روزانہ کی فہرستِ طعام میں پاکستانی اور یورپی دونوں قسم کے کھانے شامل ہوتے ہیں جبکہ رش سے بچنے کے لیے کھانا پیش کرنے کے اوقات لچکدار تھے۔ فہرستِ طعام میں گوشت، دالیں، سبزیاں، چاول، دو قسم کی روٹی، دہی، پھل، مٹھائیاں، چائے اور پانی شامل ہیں۔

اے پی پی نے کہا کہ کھانے کے متعلق رائے دینے کے طریقہ کار میں ایک ڈیجیٹل ایپ ہے جسے اب تک خوراک سے متعلق 506 شکایات موصول ہوئیں اور حل کی گئیں۔ دستی طور پر اندراج کردہ شکایات کو بھی حل کیا جا رہا تھا جبکہ 400 رکنی سرگرم پاکستان حج میڈیکل مشن (پی ایچ ایم ایم) بھی وہاں موجود تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں