.

کب سے بے خواب ہے اس خواب محل کی بنیاد

منو بھائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکہ میں پاکستان کے سفیر خلیل عباس جیلانی نے کہا ہے کہ پاکستان میں ایک خاموش انقلاب برپا ہو رہا ہے اور ملک میں تمام ادارے مضبوط ہورہے ہیں۔ توانائی کے بحران پر قابو پانے کے لئے بھاشا ڈیم سمیت دیگرتمام منصوبوں پر کام ہورہا ہے اور سال 2017ء تک 28 ہزار میگاواٹ بجلی قومی گرڈ کے حوالہ کردی جائے گی۔

امریکہ میں پاکستان کے سفیر آسٹن میں پاکستانیوں کی تنظیم پاک امریکن کلچرل ایسوسی ایشن سے خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ امریکہ کے تعاون سے ہماری پاکستانی جی ڈی پی جو کہ اس وقت ساڑھے چار فیصدہے بڑھ کر پانچ فیصد سے بھی بڑھ جائے گی۔ اس سلسلے میں عالمی بینک اورآئی ایم ایف والے بھی بھرپور تعاون اور مدد کررہے ہیں۔ عالمی سطح پر جائزہ لینے والی مانیٹرنگ ایجنسی تھی پاکستانی معیشت کو بہتر حالات کی کروٹ لیتے دیکھ رہی ہے۔ جاپانی ایجنسی کے مطابق پاکستان اس وقت دنیا کا دوسرا اہم ترین ملک ہے جو غیرملکی سرمایہ کاری کے لئے موزوں ترین قرار دیا جارہا ہے۔

پاکستانی سفیر نے بتایا کہ پاکستان کی معیشت عالمی سطح پر اٹھارویں نمبر پر ہے اور انشاء اللہ چند سالوں میں سولہویں نمبر پر آجائے گی۔ شمالی وزیرستان میں آپریشن کلین اپ کے بہترین نتائج سامنے آرہے ہیں۔ مدرسہ ریفارمز بھی جاری ہیں۔ بہت جلد پاکستان میں امن و امان کی فضا قائم ہو جائے گی اور مختلف مذاہب اور مسالک کے درمیان امن و امان اور باہمی رواداری کی فضا قائم ہو جائیگی۔

بلاشبہ مذکورہ بالا تمام خوش گوار واقعات پاکستان میں رونما ہورہے ہیں اور مثبت تبدیلیوں کو مصروف عمل دیکھا جاسکتا ہے اور بہتر مستقبل کی بھی توقع رکھی جاسکتی ہے مگر قومی انقلاب کے یہ تمام مراحل ایسے ہیں کہ جن کو خاموش قرار نہیں دیا جاسکتا تو پھر ہمارے امریکہ میں سفیر کبیر نے یہ کیوں فرمایا کہ پاکستان میں ایک ’’خاموش انقلاب‘‘ برپا ہورہا ہے۔ پاکستان میں برپا ہونے والے تمام انقلابات عام طور پر خاموش نہیں ہوتے بہت زیادہ باتونی، شوریدہ اور ہنگامی ہوتے ہیں بہت دورسے سنائی دیتے ہیں۔ جب دکھائی نہیں دے رہے ہوتے تب بھی سنائی دے رہے ہوتے ہیں چنانچہ عام پاکستانی بھی ’’شنیدہ انقلابات‘‘ پر ’’دیدہ انقلابات‘‘ سے بھی زیادہ اعتبار اوریقین کررہے ہوتے ہیں۔

وطن عزیز میں بہت عرصہ پہلے انقلاب کے خلاف ’’رد انقلاب‘‘ کا عمل خاموش ہوا کرتا تھا مگر اب تو رد انقلاب کی کار گزاری بھی کچھ زیادہ خاموش نہیں رہی بلکہ نام نہاد ’’خاموش انقلاب‘‘ سے بھی زیادہ باتونی، شوریدہ اور ہنگامہ پرور ہوگئی ہے۔ پاکستان میں انقلابی تبدیلیوں کے ساتھ حالات کی قدرتی تبدیلیاں بھی اچھی خاصی حوصلہ افزا رفتار سے عمل میں آرہی ہیں یقینی طور پر حالات کی قدرتی تبدیلیوں کے پیچھے امن پسند، انصاف پسند اور محب وطن پاکستانیوں کی خواہشات آرزوئیں اور تمنائیں بھی کام کررہی ہیں اور ان مثبت خواہشوں پر عمل درآمد کے پیچھے حکومت کے سول اور فوجی ادارے بھی اپنا مثبت کردار اپنے خون اور پسینے کی آمیزش سے ادا کررہے ہیں۔ اتحاد اور اتفاق کی فضا میں قوم مثبت راہوں پر چل کر امن و امان کی دائمی منزل کی جانب گامزن ہے۔ پاکستان کے معروف پنجابی شاعر احمد راہی کا ایک اردو شعر ہے؎

کب سے بے خواب ہے اس خواب محل کی بنیاد
کب سے خوابیدہ ہے یہ جاگتے جسموں کی زمیں

بہ شکریہ روزنامہ "جنگ"

اعلان لا تعلقی: العربیہ اردو کا کالم نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔.