.

ہمارا ممکنہ ’’ڈیگال‘‘ کون ہے؟

نصرت جاوید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

وزن کم کرنے اور رنگ گورا کردینے والی مصنوعات بنانے والوں کی طرف سے جاری کئے وہ اشتہارات تو آپ کو یاد ہوں گے جن میں مرد یا خواتین ماڈلز کی دو تصاویر ہوتی ہیں۔ ان تصاویر کے ذریعے ایسی مصنوعات کے استعمال سے پہلے اور استعمال کے بعد ’’نمایاں‘‘ نظر آنے والے فرق کو اجاگر کیا جاتا ہے۔ ہمارے میڈیا کے چند بہت ہی معتبر نام ان دنوں دہشت گردی اور کرپشن کے خلاف برپا جنگ کے حوالے سے کچھ ایسی ہی تصاویر تخلیق کرتے نظر آرہے ہیں۔

کئی برسوں سے ہمارے آزاد، مستعد اور ہمہ وقت چوکس ہونے کے دعوے دار میڈیا کی طرف سے فروغ پائی سیاپا فروشی کے شوروغوغا میں امید کی جوت جگاتی ایسی کاوشوں کا ہر اس شخص کو خیرمقدم کرنا چاہیے جس نے اپنا جینا مرنا اسی دھرتی سے وابستہ کررکھا ہے۔ میں اپنا شمار بھی ایسے لوگوں میں کرتاہوں۔ ذاتی مصیبتوں اور پریشانیوں کی شدت کے ایام میں بھی کبھی ایک لمحہ ایسا نہیں آیا جب میں نے اپنے عوام کی اجتماعی بصیرت پر اعتبار کھویاہو۔

دودھ سے بارہا جلا اور سانپ سے اکثر ڈسا میرا ذہن مگر اس وقت پریشان ہوجاتا ہے جب دہشت گردی اور کرپشن کے خلاف جاری جنگ کی ساری کامیابیاں صرف ایک ایسے ’’دیدہ ور‘‘ کے طفیل ہوتی بتائی جاتی ہیں جس کا یہ بے نور قوم ہزاروں سال سے انتظار کررہی تھی۔ بات صرف ’’دیدہ ور‘‘ کی دادو تحسین تک محدود رہے تو پریشانی کی کوئی بات نہیں۔ دل گھبراجاتا ہے تو اس وقت جب حقارت بھری رعونت کے ساتھ جمہوری نظام اور اس کے محافظ بنے لکھاریوں کو نااہل اور بدعنوان سیاست دانوں کا خدمت گزار قصیدہ گو ٹھہرادیا جاتا ہے۔

موقعہ پرست خدمت گزاروں کی خدمت کے بعد اصرار شروع ہوجاتا ہے پاکستان کے موجودہ آئینی نظام کو قطعاََ رد کردینے پر پھر ضد کی جاتی ہے ایک ایسا صدر پاکستان متعارف کروانے کے لئے ’’جو قومی سلامتی کے لئے ضروری ٹھہرے ہر فیصلے پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کا مکمل اختیار رکھتا ہوں‘‘۔

ہمیں تواتر کے ساتھ خبردار کیا جارہا ہے کہ موجودہ آئینی نظام سے چھٹکارا پاکر ایک بااختیار صدر نہ لایا گیا تو وطن عزیز کے اُفق پر ابھرتی امید بھری خبریں عارضی ثابت ہوں گی۔ ایسی خبروں کو دوام بخشنا ہے جو موجودہ آئینی انتظام سے فی الفور جان چھڑا دے۔ ’’انقلابِ فرانس‘‘ کے ذریعے پوری دنیا میں جمہوری نظام کو متعارف کروانے والے فرانس نے بھی دوسری جنگ عظیم کے بعد اپنے ملک میں پھیلی افراتفری کے خاتمے کے لئے ڈیگال کی صورت ایسا ہی صدر دریافت کیا تھا۔ ہم فرانس کے لوگوں سے زیادہ پڑھے لکھے یا انسانی حقوق کے علمبردار تو نہیں اور یہ بات تو مجھے کہنے کی ضرورت نہیں کہ ہمارا ممکنہ ’’ڈیگال‘‘ کسے بنا کر پیش کیا جارہا ہے۔

وطن عزیز کے اُفق پر اُمید کی جوت جگاتی خبروں پر شاداں ہمارے میڈیا کے چند معتبر نام خوشی سے سرشار ہوئے چند بنیادی حقائق کو قطعاََ نظرانداز کردیتے ہیں۔ اپنی تمام تر خامیوں اور کوتاہیوں کے باوجود یہ پاکستان کا ’’آزاد‘‘ میڈیا ہی تھا جس نے کراچی کے حالات پر مسلسل نظر رکھتے ہوئے امن وامان کی بحالی کی فضاء بنائی۔ پاکستان کے دیگر شہروں میں دہشت گردی سے ہونے والی تباہیوں کے مناظرنے بھی ریاست کو اپنی طاقت کابھرپور استعمال کرنے کی ضرورت محسوس کرنے پر مجبور کیا۔

اب چاہے ’’پیش قدمی‘‘ کسی طرف سے بھی ہوئی ہو مکمل حقیقت یہ بھی ہے کہ آرمی پبلک سکول پشاور والے واقعے کے بعد ہمارے ’’بدعنوان اور نااہل‘‘ ٹھہراے سیاستدان۔ خواہ ’’بددلی‘‘ ہی سے۔ اپنے شدید باہمی اختلافات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے ایک قومی ایکشن پلان کو اتفاق رائے سے اپنانے پر مجبور ہوئے۔ اس اتفاق رائے کی بدولت ’’گلے سڑے ناکارہ آئین‘‘ کے ذریعے ہی قانون نافذ کرنے والے اداروں کو غیر معمولی اختیارات دئیے گئے۔ یہ اختیارات اگر ان ذرائع سے مہیا نہ کئے گئے ہوتے تو آج الطاف حسین واویلا مچاتے مکمل تنہاء نظر نہ آتے۔ ان کا ساتھ دینے کو ان کے بدترین سیاسی دشمن بھی فوراََ تیار ہوجاتے۔ الطاف حسین کو چند اور سیاسی جماعتوں کی حمایت مل جاتی تو دنیا کو عالمی میڈیا کے ذریعے پاکستان کی صورت حال شاید معمول کے مطابق نظر نہ آتی۔

قصہ مختصر دہشت گردی اور کرپشن سے نبردآزما ہونے کے لئے جو بندوبست ڈھونڈا گیا ہے وہ اپنی تمام تر سست روی کے باوجود امید بھری خبروں کو جنم دیتا نظر آرہا ہے۔ اس بندوبست کو کرکٹ کی اصطلاح میں ایک لمبی اننگز کھیلنے کے لئے استعمال کرنا ہوگا۔ اسے T-20 کی صورت دے کر کریز سے باہر آکر چوکے چھکے لگانے کی کوشش ہوئی تو امید بھری خبریں ملنا رک جائیں گی۔

سب کو ساتھ ملاکر قوم کی اجتماعی بصیرت کے بھرپور استعمال کے ساتھ لمبی اننگز کھیلنے کی ضرورت کو سمجھنا ہو تو ذرا یہ بھی یاد کرلیجئے کہ اچھی خبروں کے اسی موسم میں ایک بہت بری خبر بھی آئی ہے۔ یہ خبر صرف ملاعمر کی موت سے متعلق ہی نہیں۔ اس سے کہیں زیادہ گھمبیر سوال یہ بھی ہے کہ ان کی موت کی خبر دو سال بعد منظر عام پر کیوں آئی۔ اس خبر کو عین اس وقت کیوں اور کس نے طشت ازبام کیا جب پاکستان کے پُرفضا شہر مری کے ایک گالف کلب میں افغان طالبان اوروہاں کی حکومت کے درمیان مذاکرات کا ایک اور دور شروع ہونے والا تھا۔ وہ دور تو شروع نہ ہوسکا۔ مگر بحث اب یہ شروع ہوگئی ہے کہ ملاعمر کا انتقال کہاں اور کن حالات میں ہوا۔ ان سوالات کا قطعی جواب تو شاید میسر نہ ہوپائے مگر ان سوالات کی تکرار اور شدت افغان طالبان کو ایک دوسرے پر بندوقیں تان لینے پر مجبور کردے گی۔ طالبان کے باہمی اختلافات سے داعش جیسی کوئی نئی قوتیں بھی جنم لے سکتی ہیں جو صرف افغانستان ہی کو نہیں اس سے ملحقہ ہمارے قبائلی علاقوں اور بعدازاں ہمارے شہروں میں ابھی تک کونے کھدروں میں دبکے حواس باختہ Sleepers Cellکو متحرک کرکے ہیجان وبحران کی کئی نئی کیفیتیں پیدا کرسکتی ہیں۔

پاکستان خدا کے فضل سے ایک مؤثر اور منظم عسکری ادارے اور چاہے گلے سڑے آئینی نظام ہی کے ذریعے قائم کمزور اور ناکارہ دکھتے منتخب ایوانوں کی بدولت اس ابتری سے اب تک محفوظ رہا ہے جس نے صومالیہ، عراق، یمن، شام اور لیبیا جیسے ملکوں کو ایک دوسرے کی جانوں کے درپے گروہوں میں تقسیم کررکھا ہے۔ ایسے حالات میں ریاست کے سب سے منظم اور طاقتور ادارے کو اس ملک کی ’’نااہل اور بدعنوان‘‘ سیاسی قیادت کے خلاف اُکسانے کی کوششیں خواہ کتنے ہی نیک مقصد سے کیوں نہ ہوں، محض آرام دہ گھروں میں بیٹھ کر بقراطی بگھارنے والوں کو ماردھار بھرپور Reality Televisionہی فراہم کرسکتی ہیں۔ اچھی خبریں ہرگز نہیں۔ خدارا ضبط سے کام لیجئے۔ برا بھلا جو بندوبست نصیب ہوا ہے اسے برقرار رہنے دیجئے۔ رحم فرمائیے۔رحم۔

بہ شکریہ روزنامہ نوائے وقت

اعلان لا تعلقی: العربیہ انتظامیہ کا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔.