حرمین سے

رمضان المبارک کے دوران متعمرین اور نمازیوں کی سہولت کے لئے خصوصی اقدامات

ضیوف الرحمان کی خدمت کی خاطر 12 ہزار کارکن تعینات اور 14 خصوصی داخلی و خارجی راستے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

عمومی صدارت برائے امور حرمین شریفین کی جانب سے رمضان المبارک میں پابندیوں کے بغیر مسجد حرام کو پوری صلاحیت کے ساتھ متعمرین اور نمازیوں کے لیے کھولنے کے اعلان کے بعد تقریباً 20 لاکھ فرزندان توحید مسجد حرام میں نماز وعمرہ ادا کریں گے۔

العربیہ نیوز کے فلیگ شپ پروگرام ’’من الحرمین‘’ میں نمائندہ خصوصی سلطان السلمی سے گفتگو کرتے ہوئے معاون برائے مدیر عام اور انڈر سیکرٹری امور مسجد حرام ڈاکٹر سعد المحیمید بتایا کہ’’مشترکہ پلان کے تحت نمازیوں اور متعمرین کے مسجد میں داخلے کے الگ الگ راستے مقرر کیے گئے ہیں تاکہ حرمین اتھارٹی اپنی صلاحیت اور منصوبے کو بروئے کار لا کر اللہ کے گھر کا قصد کرنے والوں کو اطمینان اور سہولت کے ساتھ یہ فریضہ ادا کرنے کے قابل بنا سکے۔‘‘

Advertisement

ڈاکٹر سعد کا مزید کہنا تھا کہ ’’متعمرین اور نمازیوں کی مسجد حرام آمد، قیام اور سہولیات سے پرسکون انداز میں استفادے کی خاطر ضروری ہدایات پر سکیورٹی اداروں کے تعاون سے عمل درآمد یقینی بنایا جاتا ہے۔‘‘

العربیہ کی خصوصی نیوز رپورٹ کے مطابق رمضان المبارک کے دوران صدارت عامہ نے مسجد حرام میں نمازیوں اور متعمرین کی خدمت کے لیے 12 ہزار ملازمین اور کارکن تعینات کیے ہیں۔ مسجد میں داخلے اور باہر جانے کے لیے 14 خصوصی راستے بنائے کیے گئے ہیں۔ مسجد حرام کے تینوں توسیعی منصوبے بھی کھول دیے گئے ہیں۔

ویڈیو رپورٹ کے مطابق عمر رسیدہ اور خصوصی ضروریات کے حامل افراد کے لیے مسجد حرام میں خصوصی انتظامات کئے گئے ہیں۔ ایسے افراد کے لیے 9 ہزار برقی اور موبائل گاڑیاں فراہم کی گئی ہیں۔ ضیوف الرحمن کو سہولیات فراہم کرنے کے لیے ٹیکنالوجی اور مصنوعی ذہانت کو بھی بروئے کار لایا گیا ہے۔

نامہ نگار سلطان السلمی نے بتایا کہ حرمین انتظامیہ نے تربیت یافتہ انسانی وسائل اور مجتمع تجربے کو بروئے کار لا کر اس سال رمضان سیزن کے لئے ایک ایسا سبک رفتار آپریشنل پلان تیار کیا ہے جس میں کرونا وائرس وبا سے قبل متعمرین اور نمازیوں کی تعداد کو خاص طور پر ذہن میں رکھا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں