تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
کرائسٹ چرچ: مساجد میں قتل عام کے ملزم پر دہشت گردی کی فرد جرم عاید
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

منگل 20 ذیعقدہ 1440هـ - 23 جولائی 2019م
آخری اشاعت: منگل 16 رمضان 1440هـ - 21 مئی 2019م KSA 13:40 - GMT 10:40
کرائسٹ چرچ: مساجد میں قتل عام کے ملزم پر دہشت گردی کی فرد جرم عاید
ملزم ٹرینٹ کی عدالت میں پیشی
العربیہ ڈاٹ نیٹ

نیوزی لینڈ حکام کے مطابق کرائسٹ چرچ میں دو مساجد پر حملوں میں 51 مسلمانوں کو شہید کرنے والے سفاک قاتل پر دہشت گردی کی فرد جرم باضابطہ طور پر عاید کر دی گئی ہے۔

نیوزی لینڈ کے پولیس ڈیپارٹمنٹ کی جناب سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ملزم برینٹن ٹرینٹ کے خلاف 2002 کے انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت کارروائی کی جائے گی۔

نیوزی لینڈ پولیس کے مطابق اس دہشت گردی کے مقدمے کے علاوہ سفاک ٹرینٹ پر قتل کے 51 اور اقدام قتل کے 40 الزامات کا مقدمہ بھی چلایا جائے گا۔

پولیس کے بیان کے مطابق اس دہشت گردی کے الزام کے تحت کرائسٹ چرچ حملے کو دہشت گرد حملہ ثابت کیا جائے گا۔" یاد رہے کہ نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن نے مسجد حملوں کے بعد کہا تھا کہ یہ حملے ایک منظم دہشت گرد سازش کا نتیجہ ہیں۔

نیوزی لینڈ کا انسداد دہشت گردی ایکٹ اب تک عدالت میں کسی بھی ملزم کے خلاف استعمال نہیں کیا گیا تھا اور ٹرینٹ پہلا ملزم ہے جسے اس ایکٹ کے ذریعے سے کیفر کردار تک پہنچایا جائے گا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ملزم کو دہشت گردی ایکٹ کے تحت عدالت میں پیش کرنے کا فیصلہ وکلاء اور پراسیکیوٹرز سے مشورے کے بعد کیا گیا ہے۔

اٹھائیس سالہ ٹرینٹ کو اس وقت ایک انتہائی سیکیورٹی والی جیل میں قید رکھا گیا ہے اور اس کی نفسیاتی حالت کا جائزہ لیا جا رہا ہے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند