تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
افغانستان : دو بم حملوں میں 48 افراد ہلاک ،80 زخمی ، صدر اشرف غنی محفوظ
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

بدھ 22 ربیع الاول 1441هـ - 20 نومبر 2019م
آخری اشاعت: بدھ 18 محرم 1441هـ - 18 ستمبر 2019م KSA 19:46 - GMT 16:46
افغانستان : دو بم حملوں میں 48 افراد ہلاک ،80 زخمی ، صدر اشرف غنی محفوظ
كابل - ایجنسیاں

افغانستان میں منگل کے روز دو بم دھماکوں میں اڑتالیس افراد ہلاک اور کم سے کم اسّی زخمی ہو گئے ہیں۔

ان میں پہلا بم دھماکا کابل کے شمال سے واقع وسطی صوبہ پروان کے دارالحکومت چاریکارمیں ہوا اور اس میں صدر اشرف غنی کی انتخابی ریلی کو نشانہ بنانے کی کوشش کی گئی تھی۔

افغان وزارت داخلہ کے ترجمان نصرت رحیمی نے بتایا کہ چاریکار میں صدر اشرف غنی کی انتخابی ریلی کے راستے پر واقع ایک چیک پوائنٹ کے نزدیک موٹر سائیکل پر سوار حملہ آور بم بار نے خود کو دھماکے سے اڑا دیا۔

صدر کی انتخابی مہم کے ترجمان حامد عزیز کا کہنا ہے کہ اشرف غنی انتخابی ریلی میں موجود تھے۔ تاہم وہ محفوظ رہے ہیں۔

صوبائی محکمہ صحت نے اس بم حملے میں چار فوجیوں سمیت چھبیس افراد کی ہلاکت اور چالیس کے زخمی ہونے کی تصدیق کی ہے۔ ہلاک اور زخمیوں میں بڑی تعداد خواتین اور بچوں کی ہے۔

اس بم حملے کے چند گھنٹے کے بعد دارالحکومت کابل میں دوسرا بم دھماکا ہوا۔ افغان وزارت داخلہ کے ترجمان نصرت رحیمی نے بتایا کہ شہر کے وسط میں واقع علاقے گرین زون میں بم دھماکے میں بائیس افراد ہلاک ہو گئے۔ دھماکے کے فوری بعد ایمبولینس کی گاڑیاں اور افغان فورسز جائے وقوع پر پہنچ گئیں۔

طالبان مزاحمت کاروں نے ان دونوں بم دھماکوں کی ذمے داری قبول کرنے کا دعویٰ کیا ہے اور کہا ہے کہ دونوں حملے خودکش بمباروں نے کیے ہیں۔

واضح رہے کہ افغانستان میں صدارتی انتخابات رواں ماہ منعقد ہوں گے اور صدر اشرف غنی دوبارہ امیدوار ہیں۔طالبان نے افغان شہریوں کو خبردار کیا ہے کہ وہ پولنگ مراکز میں ووٹ ڈالنے کے لیے آنے سے گریز کریں کیونکہ وہ ان کے حملوں میں نشانہ بن سکتے ہیں۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند