تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
چینی باشندوں کو 629 پاکستانی دلہنیں فروخت کیے جانے کا انکشاف
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

ہفتہ 22 جمادی الاول 1441هـ - 18 جنوری 2020م
آخری اشاعت: جمعرات 7 ربیع الثانی 1441هـ - 5 دسمبر 2019م KSA 08:16 - GMT 05:16
چینی باشندوں کو 629 پاکستانی دلہنیں فروخت کیے جانے کا انکشاف
ایجنسیاں

پاکستان کے مختلف علاقوں سے تعلق رکھنے والی 600 سے زائد لڑکیوں کو چین میں شادی کی غرض سے فروخت کیے جانے کا انکشاف ہوا ہے۔

امریکی خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس [اے پی] کے مطابق، پاکستانی تحقیقاتی اداروں نے تصدیق کی ہے کہ ملک بھر میں خواتین کی اسمگلنگ کی روک تھام کے لیے کیے گئے کریک ڈاؤن کے دوران چینی باشندوں کو فروخت کردہ دلہنوں سے متعلق اعداد وشمار مرتب کیے گئے ہیں۔

حکام کے مطابق، 2018 میں ایسے واقعات منظر عام پر آنے کے بعد باقاعدہ طور پر کارروائی کا آغاز کیا گیا تھا۔

انسانی حقوق کے ادارے ’ہیومن رائٹس واچ‘ نے بھی رواں سال اس خدشے کا اظہار کیا تھا کہ ان خواتین کو چین میں نامساعد حالات کا سامنا کرنا پڑتا ہے، جب کہ ایسی بعض خواتین کو 'جنسی غلاموں' کی طرح رکھے جانے کی اطلاعات بھی ہیں۔

البتہ، یہ شکایات بھی سامنے آتی رہی ہیں کہ اس معاملے پر چین کی ناراضگی سے بچنے کے لیے رواں سال جون کے بعد سے اس ضمن میں تحقیقات سست روی کا شکار ہیں۔

رپورٹ کے مطابق، پاکستان کے شہر فیصل آباد میں پاکستانی لڑکیوں کو چین اسمگل کرنے کے الزام میں 31 چینی شہریوں کو گرفتار کیا گیا تھا جنہیں رواں سال اکتوبر میں بری کر دیا گیا ہے۔

رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ پاکستانی میڈیا کو بھی ان خبروں کی اشاعت سے روک دیا گیا ہے جب کہ کوئی بھی سرکاری اہلکار اس معاملے سے متعلق اپنی شناخت ظاہر کرنے کے لیے تیار نہیں ہے۔

ایک تحقیقاتی افسر نے ’اے پی‘ کو بتایا کہ ان خواتین کو بچانے کے لیے کوئی بھی سنجیدگی کا مظاہرہ نہیں کر رہا۔ ’’یہ مافیا اب بھی سرگرم ہے اور اسمگلنگ میں روز بروز اضافہ ہو رہا ہے‘‘۔

چین کی وزارتِ خارجہ کا کہنا ہے وہ ایسی کسی بھی فہرست سے لاعلم ہیں۔ ان کی جانب سے جاری کیے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ گو کہ پاکستان اور چین کے شہری باہمی رضامندی اور قوانین کے تحت شادی کر سکتے ہیں۔ البتہ، اس ضمن میں زبردستی، دھوکہ دہی یا اس کی آڑ میں خواتین کی اسمگلنگ کی ہرگز اجازت نہیں دی جا سکتی۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ پاکستان میں اقلیتی برادری خاص طور پر مسیحی خاندانوں کو اپنی خواتین کی شادی چینی مردوں سے کرنے کے عوض معاوضہ دیا جاتا ہے۔ یہ چینی خود کو مسیحی ظاہر کرتے ہیں، لیکن ان خواتین کو چین اسمگل کر کے ان سے ناروا سلوک کیا جاتا ہے اور ان سے جسم فروشی کرائے جانے کی شکایات بھی سامنے آتی رہی ہیں۔

ستمبر میں پاکستانی حکام کی جانب سے وزیرِ اعظم عمران خان کو ایک رپورٹ بھی پیش کی گئی تھی، جس میں درج تھا کہ پاکستانی خواتین کی اسمگلنگ میں ملوث 52 چینی شہریوں کو حراست میں لیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ 20 پاکستانی سہولت کاروں کو بھی گرفتار کیا گیا تھا۔ لیکن ان میں سے 31 کو اکتوبر میں عدالت نے بری کر دیا۔

رپورٹ میں بتایا گیا تھا کہ لاہور میں دو غیر قانونی میرج بیوروز اس کاروبار میں ملوث تھے اور ایک میرج بیورو ایک مدرسے میں قائم تھا جس کے ذریعے غریب مسلمان لڑکیوں کو بھی چینی مردوں سے شادی کی ترغیب دی جاتی تھی۔

پاکستان اور چین کے تعلقات میں عرصہ دراز سے گرم جوشی پائی جاتی ہے۔ چین کے اقتصادی راہداری منصوبے کے تحت پاکستان میں اربوں ڈالر کے منصوبے جاری ہیں اور چین بین الاقوامی فورمز پر پاکستانی مؤقف کی بھی حمایت کرتا رہا ہے۔

چین کو خواتین کی کمی کا سامنا ہے

اعداد وشمار کے مطابق، چین کی حکومت کی 'ون چائلڈ' پالیسی کے باعث بیشتر خاندان لڑکے کی پیدائش کے خواہش مند ہوتے تھے۔

چین میں 1979ء سے 2015ء تک یہ پالیسی نافذ العمل رہی تھی جس کے باعث چینی معاشرے میں مردوں اور خواتین کے تناسب میں بہت فرق پیدا ہو گیا ہے۔ ایک اندازے کے مطابق، چین کو مردوں کے مقابلے میں تین سے چار کروڑ خواتین کی کمی کا سامنا ہے۔

ان مسائل کے باعث چینی مردوں کو شادی کے لیے خواتین نہیں ملتیں جس کی وجہ سے بیرونِ ملک سے خواتین کو چین لانے کے رجحان میں اضافہ ہوا ہے۔

ہیومن رائٹس واچ نے اپنی رپورٹ میں یہ بھی انکشاف کیا تھا کہ پاکستان کی طرح میانمار (برما) سے بھی سیکڑوں خواتین شادی کی غرض سے چین لائے جانے کے بعد دھوکہ دہی کا شکار ہوتی ہیں۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند