تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
پارلیمنٹرینز پر امریکی پابندیاں لبنانی عوام کی’ تضحیک‘ ہے: حزب اللہ
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

ہفتہ 5 رجب 1441هـ - 29 فروری 2020م
آخری اشاعت: بدھ 7 ذیعقدہ 1440هـ - 10 جولائی 2019م KSA 13:57 - GMT 10:57
پارلیمنٹرینز پر امریکی پابندیاں لبنانی عوام کی’ تضحیک‘ ہے: حزب اللہ
العربیہ ڈاٹ نیٹ

لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے ایک رکن پارلیمنٹ نے اپنی جماعت کے دو ارکان پر امریکی پابندیوں کو لبنان کی ’تضحیک‘ سے تعبیر کرتے ہوئے امریکی فیصلے کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

مقامی ٹی وی ’’ایم ٹی وی‘‘سے گفتگو کے دوران علی فیاض نے کہا کہ "امریکی فیصلہ لبنانی عوام کی تضحیک ہے۔" انہوں نے لبنانی پارلیمنٹ اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ اس امریکی فیصلے کی باضابطہ طور پر مذمت کرے اور امریکا سے وضاحت طلب کرے۔

امریکی وزارت خزانہ نے حزب اللہ سے تعلق رکھنے والے لبنانی رکن پارلیمان امین شیری اور محمد حسن رعد کو دہشت گرد کارروائیوں سے منسلک افراد کی فہرست میں شامل کردیا ہے۔ امریکی حکام کا کہنا ہے کہ حزب اللہ اپنی پارلیمانی طاقت کو استعمال کرتے ہوئے اپنے پرتشدد ایجنڈے کو پروان چڑھاتی ہے۔

اس موقع پر حزب اللہ کے ایک اعلیٰ عہدیدار وفیق صفاء کو بھی اس فہرست میں شامل کیا گیا۔

امریکی وزارت خزانہ کے انڈرسیکریٹری سیگال منڈیلکر کے مطابق "حزب اللہ لبنانی پارلیمنٹ کے ارکان کو استعمال کرتے ہوئے ریاستی اداروں کو اپنے مقاصد اور ایران کے مجرمانہ عزائم کی تکمیل کے لئے استعمال کرتی ہے۔"

امریکا کی جانب سے حزب اللہ کے منتخب نمائندوں کو پابندیوں کا نشانہ بنانے کا یہ پہلا واقعہ ہے۔ امریکی حکام ڈونلڈ ٹرمپ کی سربراہی میں ایران اور اس کے اتحادیوں پر دبائو بڑھانے کے لئے ایسے اقدامات اٹھا رہے ہیں۔

لبنانی وزیر خزانہ علی حسن خلیل نے ایک ٹویٹ میں کہا ہے کہ حزب اللہ پر امریکی پابندیاں تمام لبنانیوں کے لئے باعث تشویش ہیں اور ہم انہیں بلاجواز سمجھتے ہیں۔

حزب اللہ 2018 کے لبنانی پارلیمنٹ کی 128 میں سے 13 نشتوں پر کامیاب ہوئی جبکہ اس وقت تنظیم کے تین ارکان کابینہ میں وزیر کے عہدے پر بھی فائز ہیں۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند