تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2020

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
شام: الہول کیمپ میں داعشی خواتین مخالفین کو موت کی نیند سلانے میں مصروف
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

ہفتہ 27 جمادی الثانی 1441هـ - 22 فروری 2020م
آخری اشاعت: بدھ 19 جمادی الاول 1441هـ - 15 جنوری 2020م KSA 11:40 - GMT 08:40
شام: الہول کیمپ میں داعشی خواتین مخالفین کو موت کی نیند سلانے میں مصروف
العربیہ ڈاٹ نیٹ ـ جوان سوز

شام کے صوبے الحسکہ کے دیہی علاقے میں واقع "الہول" کیمپ میں امن و امان کی صورت حال خراب سے خراب تر ہوتی جا رہی ہے۔ یہاں سیرین ڈیموکریٹک فورسز (ایس ڈی ایف) کی حراست میں موجود داعش تنظیم کے جنگجوؤں کی بیویوں میں بعض شدت پسند خواتین قتل کی کارروائیوں کا ارتکاب کر رہی ہیں۔ اس چیز نے کیمپ میں رہنے والے ہزاروں شامی اور عراقی شہریوں کی زندگیوں کو خطرے میں ڈال دیا ہے۔

مقامی سیکورٹی حکام نے حالیہ عرصے میں بڑھ جانے والی قتل کی کارروائیوں کے پیش نظر "الہول" کیمپ میں رہنے والوں پر سخت پابندیاں عائد کر دی ہیں۔

رواں سال کے آغاز کے بعد سے اب تک کیمپ میں تین افراد کو پراسرار حالات میں موت کے گھاٹ اتارا جا چکا ہے۔

سیکورٹی ذرائع نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ یہ تنیوں افراد ہلاک کیے جانے والے تینوں افراد عراقی شہریت رکھتے ہیں۔ ان میں ایک خاتون بھی شامل ہے جس کو گذشتہ ہفتے اس وجہ سے موت کی نیند سلا دیا گیا کہ وہ کیمپ میں "جہادی خواتین کے قوانین کی پاسداری" نہیں کر رہی تھی۔ خاتون کو گلا گھونٹ کر مار دیا گیا کیوں کہ وہ شرعی لباس پہننے کا اہتمام نہیں کر رہی تھی۔ اس چیز نے کیمپ میں جہادی خواتین کو غضب ناک کر دیا اور اس کے نتیجے میں انہوں نے اس خاتون کی جان لے لی۔

گذشتہ برس اکتوبر میں شام میں ترکی کی سرحد کے نزدیک سیرین ڈیموکریٹک فورسز کے زیر کنٹرول علاقوں پر ترکی کی فوج کے حملے کے بعد الہول کیمپ میں دانستہ قتل کی کارروائیوں میں نمایاں طور پر اضافہ ہوا۔ بالخصوص جب کہ ترکی کی فوج اور اس کے ہمنوا شامی گروپوں کے خلاف لڑائی میں شرکت کے سبب کیمپ میں سیکورٹی عناصر کی تعداد کم ہو گئی۔

الہول کیمپ کے منتظمین نے صورت حال کو ایک "المیہ" قرار دیا ہے۔ اُن کے مطابق کیمپ میں داعشی خواتین کے جرائم کا اکثر و بیشتر ارتکاب دیکھنے میں آ رہا ہے۔ یہ خواتین ہر اُس عورت کو قتل کرنے یا سزا دینے کی کوشش کرتی ہیں جو شرعی لباس پہننے یا نماز کو وقت پر پڑھنے کی پابندی کے حوالے سے ان کی ہدایات کی پاسداری نہیں کرتی ہیں۔

کیمپ میں خواتین کو مختلف طریقوں سے موت کے گھاٹ اتارا جاتا ہے۔ ان طریقوں میں گلا گھونٹنا اور چُھریوں یا دیگر تیز دھار آلات کا استعمال شامل ہے۔

مقامی ذمے داران نے بین الاقوامی تنظیموں اور اداروں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ الہول کیمپ میں خواتین اور بچوں کی نفسیاتی بحالی کے لیے کام کریں۔

یاد رہے کہ اس وقت ہزاروں داعشی خواتین الہول کیمپ میں مقیم ہیں۔ ان کی مجموعی تعداد 70 ہزار سے زیادہ ہے اور ان کا تعلق مختلف یورپی، عرب اور ایشیائی ممالک کے علاوہ امریکا اور کینیڈا سے بھی ہے۔

کیمپ میں سیکورٹی حکام نے جہادی خواتین کو کیمپ سے کوچ کرنے سے روک دیا ہے۔ اس دوران صرف شامی اور عراقی شہریوں کو کیمپ سے باہر جانے کی اجازت ہے۔

کیمپ کے جس حصے میں داعشی خواتین مقیم ہیں اسے "شعبہ مہاجرین" کا نام دیا گیا ہے۔

الہول کیمپ پر کنٹرول رکھنے والے مقامی حکام بعض شام کے شمال اور شمال مشرقی علاقوں میں عرب قبائلی عمائدین اور شیوخ کے ساتھ تعاون کر رہے ہیں تا کہ شامی خواتین کو اُن کے بچوں سمیت اپنے علاقوں میں واپس بھیجا جا سکے۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند