تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
کابینہ میں ردوبدل:اعجازشاہ وزیرداخلہ ،حفیظ شیخ مشیرخزانہ ،اعظم سواتی وزیرپارلیمانی امور
فواد چودھری ،شہریار آفریدی،غلام سرورخان کی وزارتیں تبدیل ، ڈاکٹر فردوس عاشق معاون خصوصی برائے اطلاعات ونشریات مقرر
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

جمعہ 17 ربیع الاول 1441هـ - 15 نومبر 2019م
آخری اشاعت: جمعرات 12 شعبان 1440هـ - 18 اپریل 2019م KSA 22:35 - GMT 19:35
کابینہ میں ردوبدل:اعجازشاہ وزیرداخلہ ،حفیظ شیخ مشیرخزانہ ،اعظم سواتی وزیرپارلیمانی امور
فواد چودھری ،شہریار آفریدی،غلام سرورخان کی وزارتیں تبدیل ، ڈاکٹر فردوس عاشق معاون خصوصی برائے اطلاعات ونشریات مقرر
فواد حسین چودھری اور ڈاکٹرعبدالحفیظ شیخ ۔ فائل تصویر
اسلام آباد ۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ

وزیراعظم عمران خان نے وزیر خزانہ اسد عمر کے استعفے کے چند گھنٹے بعد اپنی کابینہ میں اہم ردوبدل کا اعلان کیا ہے۔انھوں نے اپنے بعض وزراء کے محکمے تبدیل کیے ہیں اور بعض نئے مشیر کابینہ میں شامل کیے ہیں۔

کابینہ ڈویژ ن کی جانب سے جمعرات کی شب جاری کردہ ایک نوٹی فکیشن کے مطابق وزیر اطلاعات فواد حسین چودھری کو ان کے عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے اور انھیں اب سائنس اور ٹیکنالوجی کا قلم دان سونپا گیا ہے۔چند روز قبل مقرر کیے گئے وزیر برائے پارلیمانی امور اعجاز شاہ کا محکمہ تبدیل کردیا گیا ہے اور انھیں ملک کا نیا وزیر داخلہ مقرر کیا گیا ہے۔پہلے وزیر داخلہ کا منصب خود وزیراعظم عمران خان کے پاس تھا اور شہریار خان آفریدی وزیر مملکت برائے امور داخلہ تھے۔انھیں اس عہدے سے ہٹا کر اب ریاستوں اور سرحدی علاقوں (سیفران) کا وفاقی وزیر مقرر کیا گیا ہے۔

وزیراعظم نے سابق صدر جنرل پرویز مشرف اور پاکستان پیپلز پارٹی کے دورِحکومت میں وفاقی وزیر خزانہ ، نج کاری اور سرمایہ کاری کے منصب پر فائز رہنے والے ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ کو اپنا مشیر خزانہ نامزد کیا ہے۔انھیں عالمی مالیاتی اداروں سے ان کے دیرینہ تعلقات کے پیش نظر یہ منصب سونپا گیا ہے۔ وہ پی پی پی کے دورِ حکومت میں 2010ء سے 2013ء تک وفاقی وزیر خزانہ رہے تھے۔ اس سے پہلے سابق صدر جنرل پرویز مشرف کے دورِ حکومت میں وہ نج کاری اور سرمایہ کاری کے وزیر رہے تھے۔وہ ماضی میں ایوان بالا سینیٹ کے رکن بھی رہ چکے ہیں۔

پیٹرولیم کے سبکدوش وزیر غلام سرور خان کو اب وفاقی وزیر برائے ہوا بازی ( ایوی ایشن) نامزد کیا گیا ہے۔بعض باخبر ذرائع کے مطابق انھوں نے کابینہ سے نکالنے کی صورت میں حکمراں پاکستان تحریک انصاف کو خیرباد کہنے کی دھمکی دے دی تھی جس کے بعد انھیں ایوی ایشن ڈویژن کا قلم دان سونپ دیا گیا ہے۔یہ وزارت پہلے نج کاری کے وفاقی وزیر محمد میاں سومرو کے پاس تھی۔

گذشتہ سال مستعفی ہونے والے سائنس اور ٹیکنالوجی کے وفاقی وزیر اعظم سواتی کو دوبارہ کابینہ میں شامل کر لیا گیا ہے اور انھیں اب پارلیمانی امور کی وزارت کا قلم دان سونپ دیا گیا ہے۔نوٹی فکیشن کے مطابق وزیراعظم نے اپنے تین خصوصی معاونین کا بھی تقرر کیا ہے۔

پیپلز پارٹی کی حکومت میں وزیر اطلاعات کے منصب پر فائز رہنے والی ڈاکٹر فردوش عاشق اعوان کو اطلاعات ونشریات ڈویژن کی معاون خصوصی مقرر کیا گیا ہے۔ڈاکٹر ظفراللہ مرزا وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے قومی صحت خدمات ، قواعد وضوابط اور رابطہ ہوں گے۔ندیم بابر کو پیٹرولیم ڈویژن کا معاون خصوصی مقرر کیا گیا ہے۔ اس سے پہلے وہ توانائی کے شعبے میں اصلاحات کے لیے قائم کردہ آٹھ رکنی ٹاسک فورس کے سربراہ رہ چکے ہیں۔وزیراعظم عمران خان کی خواہش پر ستمبر 2018ء میں انھیں اس عہدے پر مقرر کیا گیا تھا۔

وزیراعظم عمران خان کی حکومت کو اپنی بے نتیجہ اقتصادی پالیسیوں او ر ہوشربا مہنگائی پر عوامی ، سیاسی اور کاروباری حلقوں کی جانب سے کڑی نکتہ چینی کا سامنا رہا ہے لیکن اب انھیں کابینہ میں اس ردوبدل پر بھی تنقید کا سامنا کرنا ہوگا کیونکہ انھوں نے سابق صدر پرویز مشرف اور پیپلز پارٹی کے دور کے وزراء کو اپنی کابینہ میں شامل کر لیا ہے جبکہ ان میں نئے مشیر خزانہ حفیظ شیخ کا پاکستان تحریک انصاف سے کوئی تعلق بھی نہیں ہے ۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند