تمام حقوق بحق العربیہ نیوز چینل محفوظ ہیں © 2019

دوست کو بھیجئے

بند کیجئے
بھارت کا یومِ آزادی پاکستان میں یوم سیاہ کے طور پر منایا جا رہا ہے
وزیر اعظم، فوج کے ترجمان سمیت حکمران جماعت کے ٹویٹر ہینڈلرز کی ڈی پیز سیاہ ہو گئیں
دوست کا نام:
دوست کا ای میل:
بھیجنے والے کا نام:
بھیجنے والے کا ای میل:
Captchaکوڈ

 

ہفتہ 21 محرم 1441هـ - 21 ستمبر 2019م
آخری اشاعت: جمعرات 13 ذوالحجہ 1440هـ - 15 اگست 2019م KSA 13:26 - GMT 10:26
بھارت کا یومِ آزادی پاکستان میں یوم سیاہ کے طور پر منایا جا رہا ہے
وزیر اعظم، فوج کے ترجمان سمیت حکمران جماعت کے ٹویٹر ہینڈلرز کی ڈی پیز سیاہ ہو گئیں
ایجنسیاں

بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے اور نہتے کشمیریوں پر جارحیت کے خلاف پاکستان سمیت دنیا بھر میں مقیم پاکستانیوں اور کشمیریوں نے جمعرات کو بھارت کا یوم آزادی یوم سیاہ کے طور پر منایا۔ کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے پاکستان میں بھارت کا یوم آزادی پہلی دفعہ سرکاری سطح پر یوم سیاہ کے طور پر منایا گیا۔

کراچی سے خیبر تک عوام کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے اور وادی میں مظالم پر بھارت کیخلاف سراپا احتجاج ہو گئے۔ ملک بھر میں قومی سلامتی کمیٹی اور حکومتی فیصلوں کی روشنی میں جمعرات کو بھارت کے یوم آزادی کو یوم سیاہ کے طور پر منایا گیا۔ اس ضمن میں وزارت داخلہ نے نوٹی فکیشن جاری کیا تھا جس کے مطابق ملک بھر میں قومی پرچم سرنگوں رہا۔ چاروں صوبائی حکومتوں نے بھی بھارت کا یوم آزادی یوم سیاہ کے طور پر منایا۔ بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے اور وادی میں قابض فوج کے مظالم کے خلاف پاکستان نے 15 اگست کو بھارت کا یوم آزادی سرکاری سطح پر یوم سیاہ کے طور پر منانے کا فیصلہ کیا تھا۔

پاکستانی میڈیا کے مطابق یوم سیاہ کے موقع پر قابض بھارتی فورسز کے ظلم وجبر کے خلاف آزاد کشمیر سمیت ملک بھر کے شہروں، دیہاتوں اور گلی محلوں میں احتجاجی مظاہرے کیے گئے۔ ملک بھر میں سیاہ پرچم لہرائے گئے۔ وفاقی اور صوبائی دارالحکومتوں سمیت تمام شہروں کی اہم عمارتوں پر قومی پرچم سرنگوں رہا۔

یاد رہے کہ پاکستان کا 73 واں یوم آزادی کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لیے یوم یکجہتی کشمیر کے طور پر منایا گیا۔ شاہراہوں اور بازاروں میں سبز ہلالی پرچم کے ساتھ کشمیر کے پرچم بھی لگائے گئے جبکہ ملک بھر کے تمام چھوٹے بڑے شہروں اور ضلعی ہیڈ کوارٹرز میں جشن آزادی اور یوم یکجہتی کشمیر کی تقریبات منعقد کی گئیں۔

ملک کے مختلف شہروں میں کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے ریلیاں نکالی جا رہی ہے، کراچی سے خیبر تک عوام کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے اور وادی میں مظالم پر بھارت کیخلاف سراپا احتجاج ہیں۔ پاکستان کے عوام مظلوم کشمیریوں کی آواز بن گئے۔ شہر، شہر بھارت کیخلاف احتجاج کیلئے سڑکوں پر نکل آئے۔ ریلیوں اور تقاریب میں کشمیریوں سے بھرپور اظہار یکجہتی کا اظہار کیا گیا۔

ترجمان پاک فوج میجر جنرل آصف غفور نے اپنے سرکاری اور ذاتی ٹویٹر اور انسٹاگرام اکائونٹس کی ڈی پیز کو بھارت کے یومِ آزادی کے موقع پر رات 12بجے سیاہ کر دیا تھا۔ ترجمان پاک فوج کی دیکھا دیکھی تمام پاکستانی سوشل میڈیا صارفین بھی اپنی اکاونٹ ڈی پیز کا رنگ سیاہ کر رہے ہیں نہ صرف پاکستانی، بلکہ دنیا بھر میں آباد کشمیری بھی بڑھ چڑھ کر اس مہم کا حصہ بن رہے ہیں۔

کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے جہاں بڑی تعداد میں سوشل میڈیا صارفین اپنی ڈی پیز سیاہ کر رہے ہیں وہیں وزیر اعظم عمران خان، وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، اسد عمر اور تحریک انصاف کے ٹوئٹر اکاؤنٹس کی ڈی پیز کو بھی سیاہ کر دیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ حکومت پاکستان کے حکم پر رواں برس یوم آزادی پاکستان یوم یکجہتی کشمیر کے طور پر منایا گیا۔ حکومت پاکستان نے مقبوضہ کشمیر کے عوام سے اظہار یکجہتی کرتے ہوئے یوم آزادی کے موقع پر خصوصی ’لوگو’ بھی جاری کیا تھا۔ جس میں ’کشمیر بنے گا پاکستان‘ کا نعرہ درج تھا۔

نقطہ نظر

مزید

قارئین کی پسند