پہلے ایران ساختہ ہائپر سونک میزائل ’فتاح‘ کی رونمائی

فتاح نامی میزائل چودہ سو کلو میٹر تک ہر قسم کے ہدف کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے: ایرانی میڈیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ایران میں حکام نے مقامی طور پر تیار کردہ پہلا ہائپر سونک بیلسٹک میزائل منگل کے روز نمائش کے لیے پیش کیا۔ تہران حکومت کی طرف سے اٹھایا گیا یہ قدم، اس کی میزائل صلاحیتوں کے بارے میں مغربی خدشات کو بڑھا سکتا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے ’رائٹرز‘ کی خبر کے مطابق ایرانی سرکاری نیوز ایجنسی ’ارنا‘ نے ہائپرسونک بیلسٹک میزائل کی رونمائی کی خبر کو رپورٹ کیا۔

ایران کی جانب سے ہائپرسونک بیلسٹک میزائل کی رونمائی تہران کی میزائل صلاحیتوں کے بارے میں مغربی ممالک کے خدشات کو مزید بڑھا سکتا ہے۔

ایران کے سرکاری میڈیا نے ’فتّاح‘ نامی میزائل کی تصویریں شائع کیں، میزائل کی یہ تصاویر ایک تقریب کے دوران لی گئی تھیں جس میں صدر ابراہیم راہیسی اور ایران کے سپاہ پاسداران انقلاب کے کمانڈروں نے شرکت کی۔

ایران کے سرکاری میڈیا نے پاسداران انقلاب کی فضائیہ کے سربراہ امیر علی حاجی زادہ کے حوالے سے بتایا کہ ’فتّاح‘ ہائپر سونک میزائل 14 سو کلومیٹر رینج میں ہدف کو نشانہ بناسکتا ہے اور یہ تمام دفاعی نظاموں کو ناکارہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

ہائپرسونک میزائل آواز کی رفتار سے کم از کم پانچ گنا تیز تر پرواز کر سکتے ہیں جس کی وجہ سے انہیں روکنا مشکل ہو جاتا ہے، گزشتہ سال اسلامی جمہوریہ نے کہا تھا کہ اس نے ایک ہائپر سونک بیلسٹک میزائل بنایا ہے۔

سرکاری ٹی وی نے کہا کہ ایران کا ’فتّاح‘ میزائل دشمن کے جدید میزائل شکن نظام کو نشانہ بنا سکتا ہے اور یہ میزائل سازی کے میدان میں بہت بڑی کامیابی ہے۔

ایران کے سرکاری ٹی وی نے کہا کہ یہ میزائل اسرائیل کے آئرن ڈوم سمیت امریکا اور صیہونی حکومت کے جدید ترین اینٹی بیلسٹک میزائل سسٹم کو چکما دے سکتا ہے۔

اس نے مزید رپورٹ کیا کہ ’فتّاح‘ کی رفتار 15 ہزار کلومیٹر فی گھنٹہ تک ہے۔

امریکی اور یورپی ممالک کی مخالفت کے باوجود اسلامی جمہوریہ نے کہا کہ وہ اپنے دفاعی میزائل پروگرام کو مزید جدت دے گا، تاہم مغربی عسکری تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ ایران بعض اوقات اپنی میزائل صلاحیتوں کو بڑھا چڑھا کر پیش کرتا ہے۔

ایران کے بیلسٹک میزائلوں کے بارے میں خدشات نے 2018 میں اس وقت کے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے 6 بڑی طاقتوں کے ساتھ تہران سے کیے گئے 2015 کے جوہری معاہدے کو ختم کرنے کے فیصلے میں اہم کردار ادا کیا۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے جوہری معاہدے سے نکلنے کے بعد ایران پر دوبارہ امریکی پابندیاں عائد کر دی تھیں جب کہ تہران نے پہلے سے پابندی والے جوہری پروگرام کو دوبارہ شروع کر دیا تھا۔

ایران کی جانب سے پروگرام بحالی نے امریکی، یورپی ممالک اور اسرائیل کے خدشات کو بحال کر دیا تھا کہ ایران ایٹم بم بنا سکتا ہے، ایران اس طرح کے عزائم کی مسلسل تردید کرتا رہا ہے۔

ایران اور امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ کے درمیان جوہری معاہدے کو بحال کرنے کے لیے بالواسطہ بات چیت گذشتہ ستمبر سے تعطل کا شکار ہے۔

اسرائیل جسے ایران تسلیم نہیں کرتا، وہ عالمی طاقتوں کی جانب سے تہران کے جوہری معاہدے کو بحال کرنے کی کوششوں کی مخالفت کرتا ہے اور طویل عرصے سے دھمکی دیتا رہا ہے کہ سفارت کاری ناکام ہونے کی صورت میں فوجی کارروائی کی جا سکتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں