.

دہشت گردی ایکٹ کے تحت صحافی کا ایران کے خلاف مقدمہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی اخبار ’واشنگٹن پوسٹ‘ کے نامہ نگار جائسون رضائیان نے دہشت گردی ایکٹ کے تحت ایران کے خلاف امریکا کی وفاقی عدالت میں مقدمہ کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق امریکی صحافی جائیسون رضائیان کی جانب سے واشنگٹن کی ایک فیڈرل کورٹ میں دائر مقدمہ میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ ایران نے عالمی طاقتوں سے جوہری تنازع پرمذاکرات کے عرصے کے دوران اسے 18 ماہ تک جب کہ اس کی اہلیہ یغانہ صالحی کو دو ماہ تک زیرحراست رکھا گیا۔ دوران حراست انہیں جسمانی اور نفسیاتی اذیتوں کا نشانہ بنایا جاتا رہا ہے۔

خیال رہے کہ امریکی اخبار کے نامہ نگار کو دو سال قبل ایران میں حراست میں لیا گیا تھا۔ ایران کے خلاف جاسوسی کے الزام میں اسے ڈیڑھ سال تک تہران کی ایک جیل میں قید رکھا گیا۔ رضائیان کو رواں سال امریکا اور ایران کے درمیان قیدیوں کے تبادلے کے حوالے سے ہونے والی ایک ڈیل کے نتیجے میں رہائی ملی تھی۔

امریکا میں ایران کے خلاف دائر مقدمہ کی تفصیلات میں مزید کہا گیا ہے کہ ایران قیدیوں کے تبادلے کے معاملے کو جوہری معاہدے کے لیے ایک پتے کے طور پراستعمال کررہا تھا۔ ایران قیدیوں کی رہائی کے بدلے میں تہران پرعاید اقتصادی پابندیوں کے خاتمے کا خواہاں تھا۔ یہی وجہ ہے کہ اس نے کئی غیرملکیوں کو جیلوں میں ڈال رکھا تھا۔

واشنگٹن پوسٹ نے صحافی جائسون رضائیان کی اہلیہ یغانہ صالحی کا ایک بیان نقل کیا ہے جس میں ان کا کہنا ہے کہ ایرانی حکام انہیں اکثر کہا کرتے تھے کہ تمہارے قیدی شوہر کی ہمارے مذاکرات میں بڑی اہمیت اور قدور قیمت ہے۔ امریکیوں کے ساتھ ہونے والے مذاکرات میں ہم اس کی قیمت وصول کریں گے۔

امریکی عدالت میں جائیسون اور ان کے خاندان کی طرف سے دائر مقدمہ میں عدالت سے اپیل کی گئی ہے کہ دہشت گردی ایکٹ کے تحت جائیسون کو ڈیڑھ سال بلا جواز قید میں رکھنے پر ایران سے انہیں ہرجانہ دلوائے۔ خیال رہے کہ امریکا میں دہشت گردی استثنیٰ سے متعلق ایکٹ کے تحت اب تک شام، سوڈان اور ایران کے خلاف مقدمات قائم کیے جا چکے ہیں۔

دہشت گردی ایکٹ کے تحت ایران کے خلاف یہ دوسرا مقدمہ ہے۔اس سے قبل گیارہ ستمبر 2001ء کو نیویارک میں ہونے والی دہشت گردی کے متاثرین کے لیے ایران سے10.7 ارب ڈالر 2.65 ارب ڈالر اور 1983ء میں بیروت میں امریکی بحریہ کے اڈے میں دھماکوں میں ملوث ہونے پر 2.65 ارب ڈالر ہرجانے کے دعوے دائر کیے گئے تھے۔