عرب اتحادی فوج نے یمن میں ڈرون بنانے والی ورکشاپ تباہ کر دی

یمن کی قومی فوج حوثی باغیوں کے زیر قبضہ ساحلی شہر الحدیدہ سے صرف 20 کلومیٹر دور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

یمن کی آئینی حکومت کی حمایت میں سرگرم عرب اتحادی فوج کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے دعویٰ کیا ہے کہ مملکت کے جنوبی شہر ابھا کے ہوائی اڈے کو بغیر پائیلٹ والے جہاز کے ذریعے نشانہ بنانے کی کوشش ناکام بنا دی گئی۔

اپنی ہفتہ وار میڈیا بریفنگ میں انھوں نے تصاویر اور ویڈیو پرزینٹیشن کی مدد سے بتایا کہ دہشت گردی حوثی ملیشیا نے بغیر پائیلٹ والا جہاز ہینگرز سے کیسے نکالا۔ انھوں نے بتایا کہ اتحادی فوج نے ایران کے "ابابیل" نامی بغیر پائیلٹ جہاز بنانے والی ورکشاپ تباہ کر دی۔ انھوں نے ملٹی میڈیا پریزینٹیشن میں یہ بھی واضح کیا کہ کس طرح اس ورکشاپ کا سراغ لگایا گیا۔

درایں اثنا انھوں نے بتایا کہ شکست سے دوچار حوثی ملیشیا نے بچوں کے بعد اب خواتین کو بھی جنگ کا ایندھن بنانا شروع کر دیا ہے۔ انھوں نے بتایا کہ اتحادی فوج نے محاذ جنگ میں "داد شجاعت" دینے والی ایسی متعدد خواتین کو حال ہی میں حراست میں لیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس سے حوثی ملیشیا کی اخلاق باختگی کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ اب اپنی ڈوبتی ناو کو خواتین کے سہارے بچانے کی ناکام کوششوں پر اتر آئے ہیں۔

ادھر دوسری جانب یمن کی قومی فوج نے کہا ہے کہ وہ ساحلی شہر الحدیدہ سے صرف 20 کلومیٹر دور رہ گئی ہے اور وہ اس شہر کی بندرگاہ اور ہوائی اڈے پر جلد ہی قبضہ کرنے والی ہے۔

یمنی فوج کے اس بیان سے صرف ایک روز قبل ہی حوثی باغیوں کے لیڈر عبدالملک الحوثی نے ایک نشری تقریر میں اپنے جنگجوؤں کی یمنی فوج کے خلاف الحدیدہ کے مغربی ساحلی علاقے میں جاری لڑائی میں پے درپے شکستوں کا اعتراف کیا تھا۔انھوں نے اپنے پیروکاروں سے کہا تھا کہ وہ میدان ِ جنگ سے راہِ فرار اختیار نہ کریں۔

انھوں نے میدن جنگ میں اپنی ملیشیا کی شکست کو پسپائی کا نام دیا تھا اور المسیرہ ٹیلی ویژن چینل سے نشر کی گئی تقریر میں کہا کہ ’’کچھ مقاصد کے تحت پسپائی کو جنگ کا خاتمہ قرار نہیں دیا جاسکتا‘‘۔انھوں نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ ساحل کی جانب سے ’’دراندازی‘‘ کو کنٹرول کیا جاسکتا ہے۔

لیکن برسرزمین حقائق سے لگتا ہے، حوثی ملیشیا کی اپنے مضبوط گڑھ شمالی صوبے الحدیدہ میں یمنی فوج کے خلاف جنگ میں ہوا اکھڑ چکی ہے اور وہ جلد یا بدیر مکمل شکست سے دوچار ہونے والی ہے ۔یمنی فوج عرب اتحاد کی فضائی مدد سے حوثیوں کے خلاف اس فیصلہ کن کارروائی میں بڑی تیز رفتاری سے پیش قدمی کررہی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں