پینٹاگون کا ترکی کوF-35 طیاروں کی فراہمی معلق کرنے کا سرکاری اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا نے اعلان کیا ہے کہ وہ F-35 لڑاکا طیاروں سے متعلق ساز و سامان کی تمام کھیپیں ترکی کے حوالے کیے جانے کا عمل معلق کر دے گا ... تا کہ انقرہ کو روس سے S-400 میزائل شکن سسٹم حاصل کرنے سے باز رکھا جا سکے۔

پینٹاگون کے ترجمان نے پیر کے روز کہا کہ "S-400 میزائل سسٹم کی وصولی سے رکنے کے متعلق ترکی کی جانب سے واضح فیصلے کے انتظار کے بعد اب F-35 طیاروں کی حوالگی اور ترکی میں ان کے آپریشن کو سرگرم کرنے سے مربوط تمام سرگرمیاں معلق کر دی گئی ہیں"۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس اہم مسئلے کے حوالے سے ترکی کے ساتھ بات چیت جاری ہے۔

ترجمان نے کہا کہ امریکا ترکی کو مسلسل خبردار کر رہا ہے کہ S-400 سسٹم حاصل کرنے کے منفی نتائج سامنے آ سکتے ہیں اور اس طرح F-35 طیاروں کے پروگرام میں ترکی کے شریک رہنے کا سلسلہ خطرے میں پڑ جائے گا۔

ترجمان کے مطابق موجودہ صورت حال نہایت افسوس ناک ہے تاہم وزارت دفاع حساس ٹکنالوجی میں مشترکہ سرمایہ کاری کے تحفظ کے واسطے احتیاطی اقدامات کر رہی ہے۔

اس سے قبل ترکی نے جمعے کے روز باور کرایا تھا کہ روسی ساختہ S-400 دفاعی سسٹم حاصل کرنے سے پیچھے ہٹ جانے کے واسطے انقرہ پر امریکی دباؤ "بین الاقوامی قانون کی مخالفت" ہے۔ ترکی کے مطابق وہ اس سلسلے میں ماسکو کے ساتھ دستخط کیے گئے معاہدے کا احترام کرے گا۔

انطالیہ میں اپنے روسی ہم منصب سرگئی لاؤروف کے ساتھ منعقد ایک پریس کانفرنس میں ترکی کے وزیر خارجہ مولود چاوش اولو نے واضح کیا کہ "سب لوگوں پر لازم ہے کہ وہ یہ جان لیں کہ اس ذہنیت (میں یہ چاہتا ہوں ، میں چاہتا ہوں کہ یہ معاملہ اس طرح سے ہو) کا زمانہ باقی نہیں رہا"۔

امریکا کئی بار ترکی کو خبردار کر چکا ہے کہ انقرہ کی جانب سے روسی ساختہ S-400 میزائل سسٹم کی خریداری ،،، لوک ہیڈ مارٹن کمپنی کے تیار کردہ F-35 طیاروں کی سکیورٹی کو سبوتاژ کر دے گی"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں