.

سعودی فضائیہ نے حوثیوں کے داغے بیلسٹک میزائل الریاض اورجازان کی فضائی حدود میں مارگرائے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی شاہی فضائیہ نے یمن سے حوثی ملیشیا کے دارالحکومت الریاض اور جنوبی شہر جازان کی جانب داغے گئے دو بیلسٹک میزائل مار گرائے ہیں۔

سعودی عرب کی قیادت میں عرب اتحاد کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے اتوار کو ایک بیان میں کہا ہے کہ حوثی دہشت گردوں نے یہ بیلسٹک میزائل ہفتے کی شب 11 بج کر 23 منٹ پر الریاض اور جازان کی شہری آبادیوں کی جانب داغے تھے۔ سعودی شاہی فضائیہ نے ان کا سراغ لگا کر انھیں کسی ہدف پرگرنے سے پہلے ہی ناکارہ بنا دیا ہے۔

انھوں نے مزید کہا ہے کہ ’’دہشت گرد حوثی ملیشیا اور ایرانی سپاہ پاسداران انقلاب کی جانب سے اس مشکل وقت میں بیلسٹک میزائل داغنے سے اس دہشت گرد ملیشیا اور اس کے پشتیبان ایرانی نظام سے لاحق خطرے کی عکاسی ہوتی ہے۔اس جارحانہ حملے سے مملکت سعودی عرب اور اس کے شہریوں یا مکینوں کو برسرزمین نشانہ نہیں بنایا گیا ہے بلکہ اس مشکل گھڑی میں دنیا کے اتحاد اور یک جہتی کو ہدف بنانے کی کوشش کی گئی ہے۔‘‘

سعودی عرب کے محکمہ شہری دفاع کا کہنا ہے کہ ایک بیلسٹک میزائل کو الریاض کے شہری علاقوں کی فضائی حدود میں تباہ کیا گیا ہے اور اس کا ملبہ گرنے سے دو شہری معمولی زخمی ہوگئے ہیں۔

العربیہ کے نمایندے نے بتایا ہے کہ الریاض کے شمالی علاقے کے مکینوں نے میزائل پھٹنے کے بعد تین دھماکوں کی آوازیں سننے کی اطلاع دی ہے۔

حوثی ملیشیا نے اس میزائل حملے سے ایک روز قبل ہی سعودی عرب کے دو شہروں ابھا اور خمیس مشیط کی جانب بغیر پائیلٹ ڈرون چھوڑے تھےلیکن عرب اتحاد نے ان ڈرونز کو تباہ کردیا تھا۔

واضح رہے کہ یمن کے حوثی باغی گذشتہ مہینوں کے دوران میں سعودی عرب میں مختلف شہروں اور شہری مقامات کی جانب بیلسٹک میزائل داغتے رہے ہیں۔ایران کے حمایت یافتہ حوثی باغی یمن میں اقوام متحدہ کی تسلیم شدہ حکومت کے خلاف لڑرہے ہیں۔اس حکومت کو سعودی عرب اور عرب اتحاد کی عسکری حمایت حاصل ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں