.

مصر : بچی سے زیادتی کرنے والا امام عدالت کی سزا سن کر بے ہوش ہو گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے شہر المنصورہ میں ایک عدالت نے پیر کے روز ایک مسجد کے امام اور دینی مبلغ سلیمان فائد کو عمر قید کی سزا سنا دی۔ سلیمان پر الزام تھا کہ اس نے منشات البدوی گاؤں میں واقع اپنے گھر کے اندر ایک بچی کے ساتھ جنسی فعل کا ارتکاب کیا۔

عدالت نے سلیمان کو پابند کیا ہے کہ وہ بچی کے گھر والوں کو زر تلافی کے طور پر 15 ہزار مصری پاؤنڈ ادا کرے اور ساتھ ہی عدالتی کارروائی کے اخراجات بھی دے۔

اس سے قبل منشات البدوی گاؤں کی ایک 39 سالہ خاتون نے رپورٹ درج کرائی تھی کہ دینی مبلغ سلیمان فائد نے خاتون کی 10 سالہ بیٹی "جنّہ" کو جنسی ہوس کا نشانہ بنایا ہے۔ خاتون کے مطابق قرآن حفظ کرنے کا سبق ختم ہونے پر بقیہ طلبہ کے چلے جانے کے بعد سلیمان بچی کو اپنے گھر لے آتا تھا۔

جنہ کی ماں نے بتایا کہ اس کی بیٹی ملزم سلیمان کے گھر جا کر قرآن کریم حفظ کرنے میں ہچکچاتی تھی۔ کئی مرتبہ جنسی حملے کا نشانہ بننے کے بعد بچی نے سلیمان کے گھر جانے سے انکار کر دیا۔ مزید استفسار پر بچی نے سلیمان کی گھناؤنی حرکت کا اعتراف کر لیا۔ بچی کو خوف تھا کہ اس کے ساتھ پھر سے یہ واقعہ نہ پیش آئے۔

جنت کی ماں نے بتایا کہ اس کا شوہر کئی برس قبل فوت ہو چکا ہے۔ اس نے سلیمان پر اعتماد کرتے ہوئے اپنی بیٹی کو قرآن حفظ کرنے بھیجا مگر سلیمان نے بچی کی کم سنی کا فائدہ اٹھاتے ہوئے اس کی آبرو ریزی کی۔ تحقیقات کے دوران میں سلیمان نے اس جرم کے ارتکاب سے انکار کیا تاہم طبی رپورٹ میں ثبات ہو گیا کہ بچی کو زیادتی کا نشانہ بنایا گیا ہے۔