یمن اور حوثی

یمن کے متحارب فریقوں میں دوماہ کی جنگ بندی کی تجدید پراتفاق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

یمن کے متحارب فریقوں نے جمعرات سے دو ماہ کے لیے جنگ بندی کی تجدید پر اتفاق کیا ہے۔دومئی (رمضان المبارک) سے جاری جنگ بندی کی مدت آج ہی ختم ہورہی تھی۔

یمن کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی ہانس گرنڈبرگ نے ایک بیان میں جنگ بندی میں تجدید کا اعلان کیا ہے اورکہا کہ تنازع کے فریقوں نے یمن میں موجودہ جنگ بندی میں اقوام متحدہ کی تجویزپرمزید دوماہ کے لیے اتفاق کیا ہے۔

جنگ بندی میں توسیع کی مدت کا آغاز 2 جون 2022 کو یمن کے وقت کے مطابق 19:00 بجے (1600 جی ایم ٹی) سے ہوگا۔گرنڈبرگ نے مزیدکہا کہ جنگ بندی میں پہلی شرائط کے تحت توسیع کی گئی ہے۔

یمن میں امدادی گروپوں کا کہناہے کہ اپریل سے نافذالعمل جنگ بندی کے مثبت اثرات مرتب ہوئے ہیں۔صنعاء کے بین الاقوامی ہوائی اڈے سے کچھ تجارتی پروازوں کو اڑانے کی اجازت دی گئی تھی اور یمنیوں کو بیرون ملک طبی علاج معالجےکے لیے لے جایا گیا ہے۔اس جنگ بندی نے تیل کے ٹینکروں کوحوثیوں کے زیرقبضہ بندرگاہ الحدیدہ میں لنگرانداز ہونے کی اجازت دے گئی ہے جس سے صنعاء اوردیگرجگہوں پرایندھن کی قلّت میں کمی کا امکان ہے۔

لیکن یمن کے تیسرے سب سے بڑے شہرتعز پر حوثی ملیشیا کے محاصرے کو کم کرنے کی شق پر ابھی عمل درآمد نہیں کیا گیا ہے جس پرحکومت کانالاں ہے اور وہ شہر کی سڑکیں کھولنے کا مطالبہ کر رہی ہے۔

دریں اثناء حوثیوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اپنے زیر قبضہ علاقوں میں کام کرنے والے سرکاری شعبے کے ملازمین کی تنخواہیں ادا کرے۔

گرنڈبرگ نے کہا کہ جنگ بندی پرمکمل طورپر عمل درآمد خاص طورپرسڑکوں کے افتتاح اور تجارتی پروازوں کے کاموں کے معاملات سے متعلق اضافی اقدامات کی ضرورت ہوگی۔

مقبول خبریں اہم خبریں