ابوظبی:متحدہ عرب امارات کے صدر سے ایران کے اعلیٰ سکیورٹی عہدہ دار شمخانی کی ملاقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ محمد بن زاید آل نہیان سے جمعرات کو ابوظبی میں ایران کی سپریم قومی سلامتی کونسل کے سیکریٹری علی شمخانی نے ملاقات کی ہے۔

یواے ای کی سرکاری خبررساں ایجنسی وام کے مطابق انھوں نے دوطرفہ تعلقات اورمشترکہ مفادات کے حصول کے لیے مختلف شعبوں میں دونوں ممالک کے درمیان تعاون کے فروغ کے طریقوں پر تبادلہ خیال کیا ہے۔

انھوں نے باہمی دلچسپی کے علاقائی اور بین الاقوامی امور اورخطے میں ہونے والی پیش رفت سمیت امن اور تعاون کی حمایت میں مشترکہ کام کرنے کی اہمیت پر بھی بات چیت کی۔

اس ملاقات میں یواے ای کے قومی سلامتی کے مشیر شیخ طحنون بن زاید آل نہیان سمیت متعدد سینیر حکام نے شرکت کی۔انھوں نے علی شمخانی سے الگ سے بھی ملاقات کی ہے۔

ایران کی سرکاری خبر رساں ایجنسی ارنا کے مطابق شمخانی نے شیخ طحنون سے ملاقات میں کہا کہ غیرملکیوں کودوسرے ممالک میں غیرتعمیری کردارادا کرنے سے روکنے کی ضرورت ہے۔انھوں نے کہاکہ ہمیں مذاکرات اور بات چیت کے ذریعے خطے کے عوام کی سلامتی،امن اور فلاح و بہبود کوفروغ دینے کوشش کرنی چاہیے۔

علی شمخانی متحدہ عرب امارات کا یہ دورہ سعودی عرب اور ایران کے درمیان سفارتی تعلقات کی بحالی کے معاہدے کے چندروزبعد کررہے ہیں۔دونوں ممالک کے درمیان چین کی ثالثی میں اس معاہدے کا اعلان گذشتہ جمعہ کو کیا گیا تھا۔

بیجنگ میں سعودی عرب سے مذاکرات میں علی شمخانی ہی نے ایران کی نمائندگی کی تھی اور ان کے نتیجے میں معاہدہ طے پایا۔متحدہ عرب امارات نے اس اہم پیش رفت کا خیرمقدم کیا ہے۔

واضح رہے کہ یو اے ای نے بھی سعودی عرب کی پیروی میں ایران سے اپنے تعلقات کا درجہ گھٹا دیا تھا اورچھے سال کے بعد گذشتہ سال ستمبر میں اپنے سفیر کوتہران میں واپس بھیجا تھا۔

متحدہ عرب امارات نے 2016 میں سعودی عرب کے تہران میں واقع سفارت خانہ اور مشہد میں قونصل خانے پر ایرانی حکومت کے حامیوں کے حملے کے بعد ایران سے تعلقات کم کرلیے تھے جبکہ سعودی عرب نے ایران سے سفارتی تعلقات مکمل طور پرمنقطع کرلیے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں