جاپان میں ایک سکیورٹی اہلکار کی اپنے ساتھیوں پر فرینڈلی فائرنگ کا انوکھا واقعہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

جاپان میں بدھ کے روز ایک فوجی اڈے پر اس وقت افراتفری پھیل گئی جب ایک فوجی نے اپنے ساتھیوں پر فائرنگ کر دی، جس سے دو فوجی ہلاک اور دیگر زخمی ہو گئے۔

مقامی میڈیا کے مطابق مشتبہ شخص سیلف ڈیفنس فورسز کا ایک رکن تھا جسے وسطی گیفو پریفیکچر میں ایک فوجی شوٹنگ رینج سے گرفتار کیا گیا ہے۔

یہ بھی پتہ چلا کہ وہ جوان ہے، اور اس کی عمر صرف 18 سال ہے۔

انوکھےحادثات

جاپان میں فائرنگ کے واقعات انتہائی کم ہیں جہاں بندوق کی ملکیت کو سختی سے کنٹرول کیا جاتا ہے۔ کسی کو بندوق کی ملکیت کے لیے سخت شرائط سے گذرنا پڑتا ہے۔

لیکن گذشتہ جولائی (2022) میں سابق وزیر اعظم شنزو آبے کے قتل سے ملک دنگ رہ گیا جب وہ مغربی نارا کے علاقے میں ایک انتخابی ریلی میں تقریر کر رہے تھے کہ ہجوم میں سے ایک بندوق بردار نے انہیں گولی مار دی۔

بعد میں، مجرم نے اعتراف کیا کہ اسے ایک مخصوص تنظیم کے خلاف رنجش تھی اور اس نے جرم اس لیے کیا کیونکہ اسے یقین تھا کہ آبے اس سے وابستہ تھے۔

اس جرم نے ملک میں سیاست دانوں کے تحفظ کے بارے میں بالعموم اور بالخصوص وزرائے اعظم اور وزراء کے بارے میں ایک بحث کا آغاز کر دیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں