او آئی سی ہنگامی اجلاس کے لیے سعودی وزیر خارجہ کا ترک ہم منصب سے تبادلہ خیال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے اپنے ترک ہم منصب ہاکان فیدان کے ساتھ اتوار کو جدہ میں منعقد ہونے والے اسلامی تعاون تنظیم کی ایگزیکٹو کمیٹی کے ہنگامی اجلاس کی تیاریوں پر تبادلہ خیال کیا۔ اس اجلاس میں بدھ کے روز سویڈن میں قرآن پاک کا نسخہ جلانے کے واقعے کے حوالے سے کارروائی کی جائے گی۔

اناطولیہ نیوز ایجنسی نے اپنے عربی ورژن میں بتایا کہ ہفتہ کے روز ٹیلی فون پر بات چیت میں اجلاس کی تیاریوں پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ دونوں فریقوں نے اسلام مخالفت کا مقابلہ کرنے علاقائی مسائل میں تعاون کے امور پر بھی تبادلہ خیال کیا۔

عراقی نژاد سویڈش انتہا پسند سلوان مومیکا نے سٹاک ہوم کی مرکزی مسجد میں 200 مسلمانوں کے سامنے قرآن کریم کے نسخہ کو ۔ نعوذ باللہ ۔ نذر آتش کیا تھا۔ عدالت نے پولیس کو ایسے اجتماع پر پابندی لگانے سے روک دیا تھا۔ قرآن مجید کی اس بے حرمتی پر عرب دنیا اور عالم اسلام میں احتجاج شروع ہوگیا اور اس واقعہ کی بھرپور مذمت کی گئی ہے۔

سویڈن میں 6 لاکھ سے زیادہ مسلمان مقیم ہیں۔ واضح رہے جنوری میں ڈنمارک کی انتہائی دائیں بازو کی ہارڈ لائن پارٹی کے رہنما راسموس پالوڈان نے بھی سٹاک ہوم میں ترکیہ کے سفارت خانے کے قریب پولیس کی حفاظت میں قرآن پاک کے نسخے کی بے حرمتی کی تھی۔

سعودی وزارت خارجہ نے مملکت کی جانب سے "ایک انتہا پسند کی جانب سے قرآن کے نسخے کو نذر آتش کرنے کی شدید مذمت کی ہے۔ بدھ کے روز ترکیہ کے وزیر خارجہ نے نے بھی اس واقعہ کو قابل نفرت اقدام قرار دیا تھا۔

ترک وزیر نے کہا تھا کہ ایسی گھناؤنی حرکتوں کو نظر انداز کرنے کا مطلب اس میں شرکت ہے۔

ترکیہ کے صدر ایردوان نے کہا ہے کہ ترکیہ کبھی بھی اشتعال انگیزی یا دھمکی کی پالیسی کے سامنے نہیں جھکے گا۔ مغرب کے متکبرانہ حکومتوں کو سکھایا جائے گا کہ مسلمانوں کے مقدسات کی توہین فکر کی آزادی نہیں ہے۔

اسلامی تعاون تنظیم کے جنرل سیکرٹریٹ نے جمعرات کو اعلان کیا کہ وہ اسلامی سربراہی اجلاس کے موجودہ اجلاس کی صدارت کے طور پر سعودی عرب کی دعوت پر جدہ شہر میں ایک ہنگامی اجلاس منعقد کر رہا ہے۔ او آئی سی نے سویڈن میں قرآن مجید کے نسخے کی بے حرمتی کی شدید مذمت بھی کی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں