.

مصر الأنبا تواضروس قبطی چرچ کے نئے روحانی پیشوا منتخب

تین حتمی امیدواروں میں سے قرعہ کے ذریعے ایک کا انتخاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مصر میں بشپ الأنبا تواضروس کو قبطی عیسائیوں کا نیا روحانی پیشوا منتخب کر لیا گیا ہے۔ وہ پوپ شینودہ کے جانشین ہوں گے جو مارچ میں انتقال کر گئے تھے۔

قبطی چرچ کے نئے پوپ کے انتخاب کے لیے تین نام شارٹ لسٹ کیے گئے تھے۔ ان میں سے صوبہ نیل ڈیلٹا سے تعلق رکھنے والے پوپ الأنبا تواضروس کا انتخاب ایک نو عمر لڑکے نے قرعہ کے ذریعے کیا ہے۔ اس لڑکے کی آنکھوں پر پٹی باندھی گئی تھی اور اس کے بارے میں یہ خیال کیا جاتا ہے کہ اللہ نے نئے پوپ کے انتخاب کے لیے اس کی رہ نمائی کی ہے۔

وہ مصر میں عیسائیت کی آمد کے بعد سے قبطیوں کے ایک سو اٹھارویں پوپ ہوں گے۔ چند روز قبل قریباً ڈھائی ہزار قبطی عہدے داروں، ارکان پارلیمان اور صحافیوں نے پوپ کے منصب کے لیے تین حتمی امیدواروں کا انتخاب کیا تھا۔ دوسرے دو امیدواروں میں سے ایک چوّن سالہ بشپ رفاعل تھے۔ وہ ایک میڈیکل ڈاکٹر ہیں اور اس وقت وسطی قاہرہ میں معاون بشپ کے طور پر کام کر رہے ہیں۔ دوسرے امیدوار ستر سالہ فادر رفاعل ایوا مینا تھے۔ وہ ان تینوں میں سب سے ضعیف العمر تھے۔

ان تینوں کے نام قاہرہ کے سینٹ مارک کیتھیڈرل چرچ میں ایک باکس میں رکھے گئے تھے۔ قرعہ نکالنے کے لیے چرچ کے عبوری سربراہ بشپ پاشموئیس نے پانچ سے آٹھ سال کی عمر کے بارہ لڑکوں کا انتخاب کیا تھا۔

تقریب کے دوران ان میں سے ایک لڑکے کی آنکھیں باندھنے کا حکم دیا گیا اور اس نے ہی قرعے کے ذریعے الأنبا تواضروس کا نئے پوپ کے طور پر انتخاب کیا ہے۔ وہ نومبر 1952ء میں پیدا ہوئے تھے۔ تواضروس بحیرہ کے علاقے کے پوپ کے طور پر خدمات انجام دے رہے تھے۔