.

مراکشی لڑکی پر حملہ کرنے والا عدالت میں پیش ، زیادتی کی وڈیو بنانے والا گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مراکش میں جمعرات کے روز پولیس نے متنازع وڈیو کلپ بنانے کے الزام میں ایک شخص کو گرفتار کر لیا۔ مراکش میں عوامی حلقوں کو ہلا دینے والے وڈیو کلپ میں بوشان نامی قصبے کی سڑک پر ایک نوجوان کو کم عمر لڑکی کے ساتھ زبردستی زیادتی کی کوشش کرتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ واٹس ایپ پر اس وڈیو کو پھیلانے والے کی تلاش جاری ہے۔

اس سے پہلے واقعے کے حملہ آور 17 سالہ نوجوان "یاسین" کی گرفتاری اور پوچھ گچھ کے بعد اسے عدالت میں پیش کر دیا گیا۔ اس دوران حملے کا نشانہ بننے والی 17 سالہ لڑکی "خولہ" نے کئی گھنٹوں تک جاری رہنے والی تحقیقات میں بتایا کہ یہ واقعہ رواں برس جنوری میں پیش آیا۔

مقامی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے خولہ کی والدہ نے بتایا کہ وہ اپنی بیٹی کو معائنے کے لیے مراکش شہر میں ایک نفسیاتی معالج کے پاس لے کر جائیں گی کیوں کہ وہ ابھی تک حملے کے پیچیدہ اثرات سے دوچار ہے۔ انہوں نے اپنے تبصرے میں کہا کہ "اگر وہ نوجوان میرے سامنے آجائے تو میں اسے کچا چبا جاؤں گی"۔ خولہ کی والدہ نے واضح کیا کہ وہ حملہ آور کے گھرانے کی جانب سے مصالحت کی کسی بھی دعوت کو قبول نہیں کریں گی اور اس نوجوان کے لیے سخت ترین سزا کی امید کرتی ہیں۔

دوسری جانب حملہ آور نوجوان کی والدہ کا کہنا ہے کہ ان کے بیٹے جو کچھ کیا وہ اہل خانہ کے لیے عدم مسرّت کا باعث ہے۔ انہوں نے خولہ کے گھرانے سے درخواست کی کہ وہ حملہ آور نوجوان کے ساتھ درگزر کا معاملہ کرے اور اس کے مقابل اُن کے تمام مطالبات پورے کیے جائیں گے۔