.

سعودی عرب: جازان میں پرانے تاریخی قلعوں کی مرمت کی رضاکارانہ مہم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے جنوب مغربی علاقے جازان کی دائر بنی مالک گورنری میں مقامی نوجوانوں نے گورنری میں موجود پرانے اور ازکار رفتہ قلعوں کی مرمت کی رضاکارانہ مہم شروع کی ہے۔ سعودی نوجوانوں نے گورنری میں موسمی تغیرات اور مرور زمانہ کے وجہ سے مٹنے والی تاریخی عمارتوں اور قلعوں کی بحالی اور ان کی مرت شروع کرکے قومی ورثے سے اپنی بے پایاں محبت کا ثبوت دیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ نے دائر بنی مالک گورنری میں مقامی نوجوانوں کی قائم کردہ ماہرین پر مشتمل مرمتی ٹیم کے مرمتی کام کی تصاویر حاصل کی ہیں۔ مرمت اور بحالی کی اس مہم میں آل یحییٰ میں متاثر ہونے والے العصیمہ قعلے کی مرمت کی جا رہی ہے۔

KSA: Castle Renovation

موسمی حالات اور طویل وقت گذرنے کے باعث اس قلعے کی دیواریں گر چکی تھیں مگر مقامی سعودی نوجوانوں نے اس تاریخی یادگار کو دوبارہ زندہ کر دیا ہے۔

KSA: Castle Renovation

بنی دائر گورنری میں آثار قدیمہ کے امور کے ماہر یحییٰ شریف المالکی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے کاہ کہ آل یحییٰ کے مقام پر کئی ایک تاریخی قلعے موجود ہیں جو دیکھنے والوں کو سیکڑوں سال ماضی میں لے جاتے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ آل یحییٰ میں پتھر سے تیار کردہ قلعے اپنی ایک خاص انفرادیت رکھتے ہیں۔ حتیٰ کہ سعودی عرب کے کسی دوسرے علاقے میں پتھر سے بنائے گئے قلعے نہیں ملتے۔

KSA: Castle Renovation

ایک سوال کے جواب میں یحییٰ‌ الشریف نے کہا کہ آل یحییٰ میں بعض قلعے چار ہزار سال پرانے ہیں۔ ان میں بعض حمیری دور کے ہیں۔
دائر بنی مالک گوعرنری میں قلعوں کی مرمت کے لیے جاری مہم کے سربراہ جابر بن علی الیحوی نے کہا کہ مرور زمانہ، شدید بارشوں اور دیگر وجوہات کی بنا پر گورنری میں موجود پرانے قلعے یا تو منہدم ہو چکے ہیں یا ان کا بیشتر حصہ زمین بوس ہوچکا ہے۔ مقامی نوجوانوں نے گورنری کے ثقافتے ورثے کو بچانے کے لیے رضاکارانہ مہم شروع کی ہے جس میں نوجوان بڑھ چڑھ کر حصہ لے رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کی بوسیدہ قلعوں کی مرمت کے لیے ماہرین تعمیرات آثارقدیمہ کی خدمات لی گئی ہیں۔