.

سعودی عرب: کھجوروں کے بعد الاحسا کے سبز لیموں کی شہرت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مشہور لوک گیت "کھٹا میٹھا ہے" کی آوازیں آپ کے کانوں سے ٹکراتی ہیں اور دفعتا آپ الحساوی لیموں کی مخصوص بو کی طرف متوجہ ہوتے ہیں۔ آپ جانتے ہیں کہ آپ الاحسا میں المشقر پارک کے قریب ہیں جو اپنے منفرد فن تعمیر اور ماضی سے متاثر ورثے کی ایک زندہ علامت ہے۔ جہاں "لومی حساوی" وزارت ماحولیات، پانی و زراعت کی مہم کے تحت "یہ موسم ہے" کے عنوان سے الاحسا کے سبز لیموں کا میلہ سجایا گیا ہے۔

اس میلے کا مقصد مشرقی سعودی عرب اور لاحساء زرعی مصنوعات کو اجاگر کرنا، کسانوں کی حوصلہ افزائی کرنا اور انہیں سبز لیموں کی مصنوعات کی اہمیت کے بارے میں آگاہ کرنا ہے ، جو الاحسا میں اپنی نرم ساخت ، خوشبودار خوشبو اور مخصوص ذائقہ کے لیے مشہور ہیں۔ یہ لیموں گھریلو خواتین کے ہاں بے حد پسند کیا جاتا ہے۔ لیموں کی یہ قسم اپنی خوشبو کی طاقت کی وجہ سے مشہور ہے۔

اس تقریب میں الاحساء کے کسانوں کواس مستند نامیاتی مصنوعات پر بجا طور پر فخر ہے۔ میلے میں متعدد متعلقہ سرکاری ادارو نے کی شرکت تھی۔ میلے میں الاحسا میونسپلٹی ، پبلک ایریگیشن کارپوریشن ، شاہ فیصل یونیورسٹی ، الاحسا چیمبر ، سوسائٹی برائے ثقافت اور فنون اور نجے شعبے کے لیے اور نجی شعبے کی شراکت اور نمائندگی بھی شامل ہے۔

الاحسا چیمبر کونسل کے چیئرمین عبدالعزیز الموسیٰ نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ الاحساء میں زراعت اور کلچرل ٹورزم مضبوط ترین عنصر ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ اس طرح کے میلوں کے انعقاد کا مقصد الاحسا کی دیگر زرعی مصنوعات کی دلچسپی اور زرعی پیداوار کو نمایاں کرنا ہے۔ ہمیں یقین ہے کہ سیاحوں کے لیے مخصوص الاحسا مصنوعات کے بارے میں جاننا دلچسپی کا باعث ہوگا۔

انہوں نے مزید کہا کہ الاحسا چیمبر ایک عرصے سے الاحسا مصنوعات کی تیاری کی کوشش کر رہا ہے تاکہ معاشی منافع اور مصنوعات پر مالی اثرات کو بڑھایا جا سکے۔ الاحسا میں ہمیں مالی بہاؤ میں تنوع کی ضرورت ہے۔