سائبرحملہ آور غزہ اور اسرائیل کی جنگ کو انٹرنیٹ تک لے آئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سائبر ہیکنگ گروپوں کا کہنا ہے کہ وہ غزہ اور اسرائیل میں جنگ کے دوران اسرائیلی اہداف کو آن لائن متاثر کر رہے ہیں۔انہوں نے ’یروشلم پوسٹ‘ کی ویب سائٹ کو بھی کامیاب سائبر حملہ کا نشانہ بنایا ہے۔

اسرائیل اور اس کے پڑوسیوں کے درمیان تنازعہ عام طور پر شدید عالمی توجہ اور سیاسی ذہن رکھنے والے ہیکرز کو اپنی طرف متوجہ کرتا ہے، جو اپنی پسند کے فریق کی حمایت یا محض توجہ مبذول کروانے کے لیے لڑائی کا فائدہ اٹھاتے ہیں۔

سائبر انٹیلی جنس فرم ریکارڈڈ فیوچر نے کہا ہے کہ پرانے اور نئے دونوں ہیکر گروپ روزانہ درجنوں ہلاکتوں کی اطلاع دیتے ہیں۔

سنگین یا طویل مدتی نقصان کی مثالیں بہت کم ہیں، لیکن سرگرمی سے پتہ چلتا ہے کہ کس طرح حامیوں کا ایک ذیلی سیٹ جنگ کو آن لائن لانے کے لیے ڈیجیٹل ٹولز کا استعمال کر رہا ہے۔

حماس کی حمایت کرنے والے ہیکرز کے ایک گروپ نے جسے "اونون گھوسٹ" کہا جاتا ہے نے اپنے سوشل میڈیا چینلز پر دعویٰ کیا کہ اس نے دیگر واقعات کے علاوہ ایک اسرائیلی ایمرجنسی وارننگ ایپ کو بھی غیر فعال کر دیا ہے۔

گمنام سوڈان نامی ایک اور گروپ نے ٹیلی گرام پر کہا کہ وہ اسرائیل کے اہم انفراسٹرکچر کو نشانہ بنا رہا ہے، حالانکہ اس نے اپنے دعووں کے لیے بہت کم ثبوت فراہم کیے ہیں۔

سکیورٹی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ تقسیم شدہ ڈینیئل آف سروس (DDOS) حملوں نے اسرائیل میں 100 سے زیادہ ویب سائٹس کو متاثر کیا۔

یروشلم پوسٹ کے چیف ایڈیٹر ایوی مائر نے ایک ای میل میں کہا کہ "حملہ آور ہمیں پچھلے کچھ دنوں کے دوران طویل عرصے تک آف لائن کرنے میں کامیاب رہے۔ یہ آزادی صحافت پر ایک صریح حملہ ہے‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں