اسرائیلی فوج کا حماس کی زیر زمین سرنگیں مصنوعی سیلاب سے تباہ کرنے کا فیصلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج نے کہا ہے حماس کے حملوں کو روکنے کے لیے غزہ کی سرنگوں کو مصنوعی سیلاب کے ذریعے بہا کر نیٹ ورک تباہ کر دیا جائے گا۔ فوجی ترجمان ان نے میڈیا رپورٹس کی تصدیق کی ہے جن میں کہا گیا ہے کہ اسرائیل نے بالآخر مصنوعی سیلاب کی مدد سے حماس اور اس کی زیر زمین بنائی گئی پیچیدہ سرنگوں تباہ کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔

تاہم اسرائیلی فوج کے ترجمان کا کہنا ہے کہ اس مصنوعی سیلاب کے خطرے کوکم رکھنے کے لیے ضروری آلات نصب کیے گئے ہیں۔

امریکہ کی فوجی اکیڈمی کی رپورٹ کے مطابق اکتوبر میں جب جنگ شروع ہوئی تو غزہ میں 500 کلومیٹر سے زیادہ لمبی 1300 سرنگیں موجود تھیں۔ ان سرنگوں کوغزہ میٹرو' کام نام دیا گیا ہے۔ یہ حماس کی جنگی حکمت عملی میں اہمیت کی حامل ہیں۔

سات اکتوبر سے اب تک لگ بھگ 27 ہزار فلسطینی ہلاک ہو چکے ہیں۔ اس کے باوجود اسرائیلی فوج ابھی تک اپنے یرغمالیوں کو چھڑا سکی ہے نہ حماس کا خاتمہ ممکن ہوا ہے۔ اگرچہ مسلسل بمباری کی جارہی ہے، ٹینکوں کا بے دریغ استعمال جاری ہے اور اسرائیلی اتحادی ملکوں سے ڈرونز کی مدد بھی حاصل کی گئی ہے۔

واضح رہے لگ بھگ 132 اسرائیلی یرغمالی اب بھی حماس کی قید ہیں۔ خیال کیا جاتا ہے کہ ان میں سے کم از کم 28 یرغمالی ہلاک ہو چکے ہیں اور ان کی لاشیں انہی سرنگوں میں رکھی گئی ہیں۔

اسرائیلی فوج کے مطابق حماس کے ہاتھوں یرغمالی بنائے گئے افراد کو سرنگوں کے وسیع نیٹ ورک میں رکھا گیا ہے۔ دسمبر 2023 میں اسرائیلی میڈیا نے اطلاع دی تھی کہ فوج بحیرہ روم سے پمپنگ کر کے سمندری پانی کو مصنوعی سیلاب کی صورت سرنگوں کی طرف دھکیلا جائے گا۔

اس بارے میں ماہرین نے خبردار کیا تھا کہ یہ آپشن خطرناک ہے اور غزہ کے زیر محاصرہ شہریوں کے لیے بہت بڑا خطرہ ہو سکتا ہے۔ کیونکہ غزہ میں پہلے ہی سیوریج کے بنیادی ڈھانچے کو بہت نقصان ہو چکا ہے۔ تاہم اب اسرائیلی فوج نے یہ آپشن بھی استعمال کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں