فلسطین اسرائیل تنازع

قبرص سے غزہ بھجوائی گئی امداد سات امدادی کارکنوں کی ہلاکت کے بعدواپس قبرص بھیج دی گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایک سمندری قافلے کے ذریعے اس غیر تقسیم شدہ امدادی سامان کو غزہ سے واپس بدھ کے روز واپس قبرص روانہ کر دیا گیا ہے۔ یہ فیصلہ امریکی ادارے 'ورلڈ سنٹرل کچن' سے وابستہ امدادی کارکنوں کی اسرائیلی بمباری سے ہونے والی سات ہلاکتوں کے بعد کیا گیا ہے۔

240 ٹن خوراک لے کر آنے والا جہاز غزہ کے ساحل کے نزدیک پہنچنے کے بعد واپس قبرص کی بندرگاہ 'لارناکا' بھیج دیا گیا ہے۔ خیال رہے سپین کی ایک این جی او کے ذریعے پہنچنے والی یہ خوراک دوسرے بحری جہاز سے غزہ کے لیے روانہ کی گئی تھی جو اب واپس چلی گئی ہے۔ یہ اس امداد کا حصہ تھی جو قبرص سے 30 مارچ کو مجموعی طور پر 340 ٹن کی امداد کی صورت روانہ کی گئی تھی۔

'ورلڈ سنٹرل کچن' ماہ اکتوبر سے جنگ زدہ غزہ میں پچھلے چند ہفتوں سے سمندری راستے سے خوراک و دیگر امدادی سامان بھجوانے کی کوشش شروع کیے ہوئے ہے۔ لیکن پیر کے روز اس کے سات کارکنوں کی ہلاکت نے یہ امداد واپس بھیجنے کا فیصلہ کیا۔

سوشل میڈیا پلیٹ فارم 'ایکس' پر ہسپانوی 'چیریٹی اوپن آرمز' نے لکھا 'سیف الدین، زومی، ڈیمین، جیکب، جان، جم اور جیمز کی کمی محسوس ہو رہی ہے۔ ہماری یادوں میں وہ ہمیشہ رہیں گے اور ہم ان کے لیے آواز اٹھاتے رہیں گے۔ غزہ میں بے گناہ 32916 مارے گئے فلسطینی، سینکڑوں امدادی کارکن، صحافیوں کی اموات اور ہسپتالوں کی تباہی کوئی حادثہ نہیں ہے۔ بلکہ یہ غزہ میں جاری موت اور تباہی کے سب متاثرین ہیں۔ ہم انہیں کبھی نہیں بھولیں گے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں