پاکستان میں عام انتخابات کے انتہائی کامیاب ہونے کی حقیقت ناقابل تردید ہے: وزارت خارجہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

پاکستان کی وزارت خارجہ نے امریکہ، برطانیہ اور یورپی یونین کی طرف اے عام انتخابات کے دوران اٹھنے والے بعض سوالات پر اظہار تشویش پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ 8 فروری کو ہونے والے عام انتخابات انتہائی کامیاب انداز میں منعقد کیے گئے۔ اس سلسلے میں موجود حقائق ناقابل تردید ہیں۔

وزارت خارجہ کا یہ بیان امریکہ، برطانیہ اور یورپی یونین کے اظہار تشویش کے ایک دن بعد سامنے آیا ہے۔ ان ملکوں کے بیانات میں پاکستان کے عام انتخابات پر تشویش کا اظہار کیا تھا اور بے قاعدگیوں سے متعلق سامنے آنے والی رپورٹس پر تحقیقات کرانے کا مطالبہ کیا تھا۔

پاکستان میں 265 سیٹوں پر عام انتخابات 8 فروری کو ہوئے تھے۔ 133 ووٹوں کے ساتھ سادہ اکثریت ثابت کی جاسکے گی۔ وزارت عظمیٰ کے لیے اصل مقابلہ سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف کی جماعت مسلم لیگ نواز اور دوسرے سابق وزیر اعظم عمران خان کی جماعت پاکستان تحریک انصاف کے درمیان ہے۔

دونوں جماعتوں نے اپنی اپنی کامیابی اور اسمبلی میں سادہ اکثریت کا دعویٰ کیا ہے۔ امریکہ،برطانیہ اور یورپی یونین نے انتخابی عمل میں مداخلت اور رہنماؤں کے علاوہ کارکنوں کی گرفتاریوں پر بھی اپنے تشویش پر مبنی بیانات دیے ییں۔ اسی طرح انتخابی عمل میں روا رکھی گئی مداخلت کے علاوہ دھوکہ دہی کی تحقیقات کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ ان ممالک کے منفی انداز پر ہمیں حیرت ہوئی ہے۔ ان کے اس بیان میں ووٹ کے استعمال کے حوالے سے آزادانہ اور پرجوش انداز میں لوگوں کی شرکت کا کوئی ذکر نہیں کیا گیا اور نہ ہی پاکستان کے انتخابی نظام کو سمجھنے کی کوشش کی گئی ہے۔

یہ حقائق ہیں کہ پاکستان نے ایک انتہائی پرامن ماحول میں انتخابی عمل کو کامیابی کے ساتھ مکمل کیا ہے حالانکہ دہشتگردی کے حوالے سے کئی خطرات موجود تھے۔

یورپی یونین نے جاری کردہ بیان میں سب سیاسی جماعتوں کے امیدواروں کے لیے ایک جیسے میدان کی کمی کی نشاندہی کی تھی کہ بعض سیاسی لوگوں کو نااہل قرار دیتے ہوئے انتخابی عمل کا حصہ نہیں بننے دیا گیا۔ حتیٰ کہ حق اجتماع، حق اظہار اور مواصلاتی رسائی کے حوالے سے انٹرنیٹ کی سہولت سے بھی محروم کر دیا گیا۔

دفتر خارجہ نے اس الزام کی تردید کی ہے کہ پورے ملک میں انٹرنیٹ کی سہولت معطل کر دی گئی تھی بلکہ کہا گیا ہے کہ صرف موبائل فون سروس بند کی گئی تھی کیونکہ دہشتگردی کے حوالے سے کچھ خطرات موجود تھے۔

واضح رہے پاکستان میں الیکشن کے روز دہشت گردی کے 56 واقعات رپورٹ کیے گئے ہیں۔ جس کے دوران 16 لوگ ہلاک ہوئے اور 54 زخمی ہوئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں