پاکستانی حجاج کی سہولت کے لیے مکہ مکرمہ، مدینہ منورہ میں حج کنٹرول روم قائم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

وزارتِ مذہبی امور نے بدھ کو تصدیق کی کہ پاکستان نے عازمینِ حج کی سہولت کے لیے مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ کے مقدس شہروں میں ایک ایک کنٹرول روم قائم کیا ہے کیونکہ سالانہ اسلامی حج سے قبل ہزاروں پاکستانی سعودی عرب پہنچ رہے ہیں۔

پاکستان کی وزارتِ مذہبی امور نے تصدیق کی ہے کہ ملک سے تقریباً 15,819 عازمین حج شروع ہونے سے چند ہفتے قبل سعودی عرب پہنچ چکے ہیں۔

اس سال 179,210 پاکستانی سرکاری اور پرائیویٹ سکیموں کے تحت فریضۂ حج ادا کریں گے۔ پاکستان نے گذشتہ ہفتے ایک مہینے کا فلائٹ آپریشن شروع کیا۔ پانچ ائیر لائنز پی آئی اے، سعودی ائیر لائنز، ائیر بلیو، سیرین ائیر اور ائیر سیال 9 جون تک پاکستان کے آٹھ بڑے شہروں سے جدہ اور مدینہ کے لیے 259 پروازیں چلائیں گی۔

حکومت ہزاروں پاکستانی عازمین کو حج کنٹرول رومز کے ذریعے سہولت فراہم کرنے کا ارادہ رکھتی ہے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ ان کا حج پریشانیوں سے پاک رہے۔

وزارتِ مذہبی امور کے ترجمان محمد عمر بٹ نے مدینہ منورہ سے فون کے ذریعے عرب نیوز کو بتایا، "ہم نے دو کنٹرول روم قائم کیے ہیں: ایک مرکزی کنٹرول روم مکہ مکرمہ میں اور حاجیوں کی سہولت کے لیے ایک برانچ آفس مدینہ منورہ میں۔"

انہوں نے کہا کہ مکہ اور مدینہ میں دونوں کنٹرول رومز عازمین کو دن بھر 24 گھنٹے سہولت فراہم کریں گے۔

بٹ نے وضاحت کی، "تمام عازمین کو ایک کارڈ فراہم کیا گیا ہے جو وہ شناخت کے لیے پہنتے ہیں اور ہر کارڈ کے پیچھے کنٹرول روم کے نمبر درج ہیں تاکہ وہ کسی بھی ہنگامی صورت حال یا شکایت کی صورت میں کنٹرول روم سے فون پر رابطہ کر سکیں۔"

انہوں نے کہا، اس سال پاکستان نے پاک حج موبائل ایپلی کیشن کے ذریعے حج کو ڈیجیٹل کرنے میں سعودی حکومت کے اقدام کی پیروی کی ہے۔ بٹ نے کہا، شکایات درج کرنے اور ان پر پیش رفت کا پتہ لگانے کی صلاحیت سمیت یہ ایپ تمام ضروری معلومات فراہم کرتی ہے۔

"ہمارے پاس کنٹرول روم میں شکایات کے انتظام کے نظام کے تحت ایک لائیو ڈیش بورڈ قائم ہے جس میں موصولہ اور حل شدہ شکایات، حاجیوں کی نقل و حرکت اور دیگر عمومی سوالات کی تمام تفصیلات دکھائی جاتی ہیں۔"

ترجمان نے کہا کہ گذشتہ سات دنوں کے دوران پاک حج موبائل ایپ کے ذریعے موصول ہونے والی 195 شکایات کا ازالہ کیا گیا اور مقدس شہروں میں اپنی منزل کا راستہ بھول جانے والے 25 عازمین کی رہنمائی کی گئی۔

انہوں نے مزید کہا کہ محکمہ گمشدگی و بازیابی کے پاس 111 بیگز اور سات وہیل چیئرز موجود تھیں جنہیں ان کے مالکان کے حوالے کر دیا گیا ہے۔

بٹ نے کہا کہ چونکہ پاکستانی عازمینِ حج اس وقت مدینہ منورہ پہنچ رہے تھے تو وہاں کا کنٹرول روم مکہ مکرمہ کے مقابلے میں زیادہ فعال تھا اور اس میں 54 اہلکار اور 18 حج معاونین تھے۔

انہوں نے کہا کہ یہ عازمین مدینہ منورہ میں آٹھ روزہ قیام کے بعد 17 مئی سے مکہ مکرمہ جائیں گے۔

بٹ نے کہا کہ مکہ کنٹرول روم کا عملہ صرف آٹھ افراد پر مشتمل تھا کیونکہ پاکستانی حاجیوں نے ابھی مقدس شہر میں آنا شروع نہیں کیا ہے۔

انہوں نے کہا، "اس کے ساتھ سعودی حکومت اور پاکستانی حج مشن کی طرف سے جاری کردہ تمام ایڈوائزری بھی ان کنٹرول رومز کے ذریعے موبائل ایپ پر اپ لوڈ کی جاتی ہیں۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں