سڑکوں کی صفائی سے مقابلہ حسن جیتنے تک، مراکشی خاتون خاکروب کی کہانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مراکش کی 25 سالہ خاتون خاکروب سناء معطاط کو سڑکوں کی صفائی اور کچرا جمع کرنے جیسا محنت طلب کام اور گھریلوں ذمّے داریوں کا بار کبھی بھی اپنے ظاہری جمال اور جلد کی خوب صورتی پر توجہ دینے سے نہ روک سکا۔ زندگی کے دشوار حالات کے باوجود وہ مراکش میں 2018ء کے لیے خوب صورت ترین خاتون خاکروب کا اعزاز حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئی۔

کچھ عرصہ قبل اس اعزاز کا تاج سر پر سجانے کے بعد سناء کی کئی تصاویر سوشل میڈیا پر وسیع پیمانے پر گردش میں آئیں۔ ان تصاویر میں وہ خاکروبوں کی سرکاری وردی میں ملبوس نظر آ رہی ہے۔ بعض لوگ تو یہ یقین کرنے پر ہی تیار نہیں کہ جادوئی مسکراہٹ رکھنے والی یہ پُرکشش لڑکی ایک خاکروب ہے۔ تاہم سناء جو دو بچوں کی ماں بھی ہے اپنے پیشے پر فخر محسوس کرتی ہے اور اس نے اپنا پیشہ تبدیل کرنے کے بارے میں کبھی نہیں سوچا۔

خاکروب خواتین کی ملکہ حسن کا اعزاز حاصل کرنے والی سناء کا کہنا ہے کہ اس نے خاکروبی کا پیشہ اس لیے اپنایا تا کہ وہ خود صاف ستھری رہے اور اپنے بچوں اور شوہر کو اچھی زندگی سے سکے جو بے روزگار ہو گیا ہے۔ سناء کے مطابق اپنے وطن کی سڑکوں کی صفائی اس کے لیے اعزاز کا باعث ہے۔

سناء معطاط کو مراکش میں خواتین خاکروبوں کی ملکہ حسن کا اعزاز صرف اس کی ظاہری کشش اور روشن چہرے کے سبب حاصل نہیں ہوا بلکہ کام میں اس کی مہارت اور نظم و ضبط نے بھی اس سلسلے میں اہم کردار ادا کیا۔ مقابلے کا انعقاد اور خواتین خاکروبوں کو اعزازات سے نوازنے والی کمپنی نے شرط عائد کی تھی کہ خوب صورتی اور صفائی دونوں کا ہونا لازم ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں