.

اٹلی کے چرچ میں سماجی فاصلوں پر عمل درآمد کے منفرد ڈیوائس ایجاد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کرونا وائرس سے بچائو کے لیے پوری دنیا میں سماجی فاصلوں کے اصولوں پر زور دیا جاتا ہے۔ اس حوالے سے حکومتیں اور عوام مختلف طریقے اختیار کرتے ہیں۔

اٹلی میں ایک گرجا گھر نے مذہبی سروس کے لیے آنے والوں اور انتظامیہ کے افراد میں کرونا وائرس سے بچائو کے لیے سماجی فاصلوں کے احترام کا ایک نیا طریقہ اپنایا ہے۔

فلورنس میں ڈوومو کیتھیڈرل نے ایسے آلات تیار کیے جنہیں گلے میں ڈال کر ارد گرد موجود افراد سے فاصلہ رکھنے میں مدد فراہم کی جا سکتی ہے۔ یہ آلات ملاقاتیوں کے درمیان سماجی دوری کے احترام کا جدید اور بہترین طریقہ سمجھا جاتا ہے۔

اٹلی میں دو ماہ کی سخت ترین پابندیوں کے بعد مختلف ثقافتی مراکز اور سیاحتی کمپنیاں دوبارہ اپنے کاروبار شروع کرنے کی کوشش میں ہیں۔ ڈوومو کیتھیڈرل کے منتظمین نے ہفتے کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ ہر آنے والے کو سماجی فاصلوں کو یقینی بنانے میں مدد فراہم کرنے والا یہ آلا آلہ مفت فراہم کیا جائے گا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ جب دو افراد ایک دوسرے سے دو میٹر کے فاصلے پر ہوتے ہیں تو آلہ ایک نرم آواز کے ساتھ حرکت کرتا اور سرخ رنگ کی روشنی کے ساتھ زائرین کو متنبہ کرتا ہے۔

اٹلی کے اس ثقافتی اور مذہبی مرکز کے منتظمین کا کہنا ہے کہ سماجی فاصلوں کے لیے یہ اپنی نوعیت کی پہلی ڈیوائس ہے جسے کیتھیڈرل میوزیم میں آنے والے زائرین کو دی جاتی ہے۔ یہ ڈیوائس استعمال ہونے بعد دوبارہ جراثیم سے پاک کی جاتی ہے تاکہ اس کے ذریعے وائرس کسی دوسرے شخص تک منتقل نہ ہو سکے۔

ڈوومو میوزیم کے ڈائریکٹر تیمتھی ورڈن نے کہا کہ گرجا گھر اور میوزیم آئندہ دنوں میں فلورنس کے رہائشیوں اور شہر میں آنے والوں کے لیے اپنے دروازے کھولنے کا ارادہ رکھتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ بہت کم لوگ اس جگہ کا دورہ کریں گے۔ یہاں آنے والوں کو یہ ڈیوائس پہلی بار مفت ملے گی۔