.

کرونا وائرس؛حقیقت یا افسانہ:اب تک کیا کیا سازشی نظریات سامنے آئے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دنیا میں کروناوائرس کی وَبا پھیلنے کے بعد سے اب تک میڈیا میں اس کی خبریں سب سے نمایاں انداز یا شہ سرخیوں کے ساتھ شائع کی جارہی ہیں۔ کووِڈ-19 کی وَبا کو پھیلنے سے روکنے کے لیے دنیا کے ملکوں نے اپنے ہاں لاک ڈاؤن کا نفاذ کیا ،اپنی بین الاقوامی سرحدیں بند کردیں اور فضائی کمپنیوں کو اپنی پروازیں بند کرنا پڑی ہیں۔

جنگوں یا وبائی امراض کے بحرانوں کے وقت سازشی نظریات بھی بڑی تیزی سے پھیلتے ہیں۔کرونا کی وبا کے دوران میں توسازشی نظریات وائرس ہی کی طرح پھیلتے رہے ہیں اور اب تک پھیلائے جارہے ہیں۔

دنیا میں قریباً ایک صدی کے بعد صحت عامہ کے سب سے بڑے عالمی بحران کے دوران میں گذشتہ ایک سال میں غلط اطلاعات (مِس انفارمیشن) اور سازشی نظریات کی تشہیر کی گئی ہے۔بالخصوص انٹرنیٹ اور سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر جھوٹی خبریں (فیک نیوز) پھیلائی گئی ہیں۔

ان سازشی نظریات میں سے ایک یہ تھا کہ نئے 5 جی وائرلیس براڈبینڈ سے کرونا وائرس پھیلا تھا اور یہ کہا گیا تھا کہ اس وائرس کو حیاتیاتی ہتھیار کے طور پردنیا میں پھیلایا گیا تھا۔دسمبر2019ء میں چین کے وسطی شہر ووہان میں کرونا وائرس پھیلنے کے بعد سے اب تک جو سازشی نظریات پھیلے یا پھیلائے گئے ہیں،ان کی مختصر تفصیل حسبِ ذیل ہے:

5جی:وَبا پھیلانے کا بڑا ذریعہ

کرونا وائرس پھیلنے کی سب سے عجیب وضاحت یہ بیان کی گئی ہے کہ یہ وَبا5 جی موبائل ٹیکنالوجی کے منظرعام پر آنے کے نتیجے میں پھیلی ہے۔بعض لوگوں نے یہ دلیل پیش کی تھی کہ کروناوائرس کو اس لیے تخلیق کیا گیا تھا تاکہ 5 جی ٹیکنالوجی کو متعارف کراتے وقت لوگ اپنے گھروں ہی میں مقیّد رہیں۔

بعض دوسرے لوگوں کا کہنا ہے کہ 5 جی سے ایسی تابکاری لہریں نکلی تھیں جن سے لوگوں کا مدافعتی نظام کم زور پڑ گیا تھا اور اس طرح وہ وائرس کا آسان ہدف بن گئے تھے جبکہ بعض نظریات دانوں نے یہ دعویٰ کیا تھا کہ 5 جی ٹیکنالوجی براہِ راست وائرس کو منتقل کرنے کا سبب بنی ہے۔

سازشی نظریات دوواقعات کا باہم ناتا جوڑتے ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ ان دونوں وقوعات کا آپس میں گہرا تعلق ہے۔جونہی 5 جی نیٹ ورکس کو تیزی سے پھیلایا گیا تو عین اس وقت کرونا وائرس کی وبا بھی پھیلنا شروع ہوگئی تھی۔

یوگوو کیمبرج گلوبل ازم پراجیکٹ نے دنیا کے 25 ممالک میں قریباً 26 ہزار لوگوں سے سروے کیا تھا۔ان میں سے ہر پانچویں جواب دہندہ کا تعلق ترکی ، مصر ، نائجیریا اور جنوبی افریقا سے تھا۔وہ سب اس بات میں یقین رکھتے تھے کہ کرونا وائرس کی علامات کو 5 جی کے انسانی جسم پر براہ راست اثرات کے سبب مہمیز ملی تھی۔

اس نظریے کے ردعمل میں عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کو یہ وضاحت کرنا پڑی تھی کہ کرونا وائرس موبائل نیٹ ورکس سے پھیلتا ہے اور نہ ان کے ذریعے سفرکرتا ہے۔اس نے اس کے ثبوت میں یہ بھی کہا تھا کہ یہ ان ممالک میں بھی پھیلا ہے جہاں سرے سے 5 جی نیٹ ورکس موجود ہی نہیں۔

اس سازشی نظریےکو ان نمایاں شخصیات نے پھیلایا تھا جن کے سوشل میڈیا پر پیروکاروں کی تعداد بہت زیادہ ہے۔اس کے ردعمل میں برطانیہ اور بعض دوسرے ممالک میں سیل فون کے ٹاوروں کو نذرآتش کردیا گیا تھا۔

بل گیٹس پر الزام

سازشی نظریات دانوں نے یہ بھی دعویٰ کیا تھا کہ کرونا وائرس کی وَبا لوگوں کے جسموں میں ویکسین کے ذریعے ایک مائکروچپ داخل کرنے کے لیے پھیلائی گئی ہے اور جن لوگوں کو ویکسین لگائی جائے گی،ان کے جسموں میں اس طریقے سے ایک مائکروچپ بھی داخل کر دی جائے گی اوریوں اس کے ذریعے لوگوں کا بآسانی سراغ لگایا جاسکے گا۔

اس ضمن میں مائکروسوفٹ کے شریک بانی بل گیٹس پر الزام عاید کیا گیا تھا کہ وہ اس مائکرو چپ کو بنا رہے ہیں اور اس کے ذریعے ایک طرح سے دنیا بھر کی آبادی کو کنٹرول کیا جائے گا۔

بِل اور میلنڈا گیٹس فاؤنڈیشن نے اس دعوے کو مسترد کردیا تھا اور بل گیٹس بہ ذات خود اس نظریے کو’’احمقانہ‘‘ اور ’’فضول‘‘ قرار دیا تھا۔

بل گیٹس کو عالمی ادارہ صحت کے لیے فنڈز کی عدم دستیابی پر آواز اٹھانے پر بھی تنقید کا نشانہ بننا پڑا تھا۔ان پر2015ء میں ٹیڈٹاک کی ایک ویڈیو کی وجہ سے بھی کڑی نکتہ چینی کی گئی تھی۔اس تقریر میں انھوں نے ایبولا کی طرح کی ایک اور وبا کے بارے میں خبردار کیا تھا۔اس پر لوگوں نے یہ قیاس آرائی کی تھی بل گیٹس ممکنہ طور پر کرونا وائرس سے پیشگی آگاہ تھے۔

کرونا وائرس: ایک نیا حیاتیاتی ہتھیار

ایک مفروضہ یہ ہے کہ اس وائرس کا سرے کوئی فطری منبع نہیں ہے۔آن لائن تھیورسٹوں نے یہ دعویٰ کیا تھا کہ کووِڈ-19 کو دراصل ایک اعلیٰ سطح کی حیاتیاتی لیبارٹری میں بنایا گیا تھا۔اس ضمن میں چینی سائنس دانوں پر الزام عاید کیا گیا تھا کہ انھوں ہی نے اس وائرس کو ڈیزائن کیا اور جدید دور کے حیاتیاتی ہتھیارکے طور پر پھیلایا تھا۔یہ بڑا مہلک اور کارگرہتھیار ثابت ہوا ہے۔

پیو ریسرچ کے ایک مطالعہ کے مطابق ہر10 میں سے تین امریکی اس بات میں یقین رکھتے تھے کہ کووِڈ-19 کو حادثاتی یا جان بوجھ کرلیبارٹری میں بنایا گیا تھا۔ مؤخرالذکرمفروضے پر زیادہ یقین کیا جاتا رہا ہے۔ بالخصوص 23 فی صد کے بارے میں یہ یقین کیا جاتا ہے کہ یہ جان بوجھ کر پھیلایا گیا تھا۔صرف چھے فی صدکا یہ خیال تھا کہ یہ حادثاتی طور پر پھیلا تھا۔پیو ریسرچ نے یہ سروے وائرس کے عروج کے دنوں میں کیا تھا۔

امریکی فوج کووِڈ-19 کوچین میں لائی تھی؟

ووہان کی کسی لیبارٹری میں کرونا وائرس کی پیدائش سے متعلق سازشی نظریے کے ردعمل میں امریکی فوج کے بارے میں ایک مسابقتی سازشی نظریہ پھیلایا گیا تھا اور وہ یہ کہ امریکی فوج چین میں کرونا وائرس کو لے کر آئی تھی۔اس کو ووہان میں چھوڑا گیا اور یہ وہاں سے پھر چین کے دوسرے علاقوں اور دنیا بھر میں پھیلا تھا۔

اس نظریے کو ابتدائی طور پر چینی وزارت خارجہ کے ترجمان ژاؤ لی جیان نے پھیلایا تھا۔انھوں نے تب ایک ٹویٹ میں کہا تھا کہ امریکی فوج ممکنہ طور پر اس وائرس کو ووہان میں لے کر آئی تھی۔

ان کے اس بیان کی چین میں خوب تشہیر کی گئی تھی اور پھر اس افواہ کو تقویت ملی تھی کہ امریکی فوج کے اہلکار اکتوبر 2019ء میں عالمی فوجی مشقوں میں شرکت کے لیے ووہان میں آمد کے وقت اس وائرس کو لے کر آئے تھے۔

کووِڈ-19:افسانہ نہیں حقیقت

پیشہ ور سازشی نظریات دانوں انفو وار کے دائیں بازو کے سازشی تھیورسٹ ایلکس جونز تو یہ کہتے ہیں کہ کووِڈ-19 کا درحقیقت کوئی وجود ہی نہیں ہے۔

اس کے بجائے انھوں نے یہ تھیوری پھیلائی ہے کہ وَبا تو محض حکومتوں کا ایک ہتھکنڈا ہے اور وہ اس کے ذریعے شہریوں کی آزادی چھیننا چاہتے ہیں۔اس نظریے کی ابتدائی شکل میں یہ کہا گیا تھا کہ کرونا وائرس فلو سے زیادہ خطرناک نہیں ہے۔