مدینہ منورہ کی مسجد ’’ القلعہ‘‘ کی تزئین و آرائش، اسلامی ثقافت کی بھی ترویج

’’شہزادہ محمد بن سلمان کا تاریخی مساجد کی بحالی کا منصوبہ‘‘ کے دوسرے مرحلہ میں 30 مساجد کی تجدید ہوگی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مدینہ منورہ سے 102 کلومیٹر شمال مشرق میں ’’الحناکیہ‘‘ قصبے میں تاریخی مسجد ’’ القلعہ‘‘ کی تزئین و آرائش کی جارہی ہے۔ اس مسجد کی عمر 100 سال سے زیادہ ہو چکی ہے۔ مسجد ’’ القلعہ‘‘ بھی ان 30 مساجد میں شامل ہے جنہیں ’’ شہزادہ محمد بن سلمان کے تاریخی مساجد کی بحالی کے منصوبے‘‘ کے دوسرے مرحلے میں ترقی دی جارہی اور ان کو تزئین و آرائش کرکے بحال کیا جارہا ہے۔

اس پروجیکٹ کا مقصد انسانی، ثقافتی اور فکری ماحول کی تشکیل میں تاریخی اور سماجی اثرات کے ساتھ ساتھ مملکت کی اسلامی تہذیب کو مضبوط بنانا بھی ہے

تجدید اور ترقی کے بعد مسجد القلعہ کا رقبہ 181.75 مربع میٹر سے بڑھا کر 263.55 مربع میٹر کیا جارہا ہے۔ ترقی کے بعد اس مسجد کی گنجائش 171 نمازیوں تک پہنچ جائے گی۔ پروجیکٹ کے تحت مسجد کی تعمیر کو اس کی پرانی شکل میں بحال کرنے کے لیے مٹی اور مقامی درختوں کی لکڑی کے قدرتی مواد کا استعمال کیا جائے گا۔ اس طرح قدیم تعمیراتی تکنیکوں کو بھی محفوظ کر لیا جائے گا۔ یہ تعمیراتی تکنیک ایسی ہے جو مسجد کو مقامی ماحول اور گرم صحرائی آب و ہوا سے نمٹنے کی صلاحیت میں ممتاز بنا دیتی ہے۔

واضح رہے تاریخی مساجد کی ترقی کے لیے شہزادہ محمد بن سلمان کا منصوبہ قدیم اور جدید تعمیراتی معیارات کے درمیان توازن قائم کرکے کام کرتا ہے۔ اس طرح مساجد کے اجزاء کو مناسب حد تک پائیداری مل جاتی ہے ۔ ترقی کے اثرات کو ورثے کے ساتھ مربوط بھی کردیا جاتا ہے۔ تاریخی مساجد کی بحالی کے اس منصوبے میں ان سعودی کمپنیوں سے کام لیا جارہا ہے جو ورثہ کی عمارتوں کے تحفظ اور تعمیر میں مہارت رکھتی اور انہیں پہلے سے اس کام کا تجربہ بھی حاصل ہے۔

یاد ہے دوسرے مرحلے میں 30 مساجد کی بحالی کی طرح اس سے قبل پروجیکٹ کے پہلے مرحلہ میں بھی سعودی عرب کی 30 تاریخی مساجد کی تزئین و آرائش کی جا چکی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں