سعودی عرب کی کھجوریں: اقسام، ان کے فوائد اور پختگی کے مراحل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

کھجور خاص طور پر سعودی عرب اور بالعموم ہر عرب، خلیجی دسترخوان کا لازمی حصہ ہوتی ہے۔ غذائیت سے بھرپور اس پھل کو اس کی دینی اہمیت اور ذائقے کے باعث بھی تہواروں ، تقریبات ، اور تحائف کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔

سعودی عرب میں ان دنوں، کھجوروں کے پھل پکنے کا موسم ہے، یہ درختوں، میزوں اور بازاروں میں عام نظر آتی ہیں۔ ہر سال جولائی کی آمد کے ساتھ ہی کھجور تیار ہو جاتی ہے، اور پھل اترنے کا موسم دو سے ڈیڑھ ماہ تک رہتا ہے۔

کھجور کی تیاری کے مراحل

کھجوریں تیاری کی مرحلے اور اپنی قسم کی وجہ سے سائز، رنگ اور ذائقہ میں ایک دوسرے سے مختلف ہوتی ہیں۔بلکہ ان میں بہت سے غذائی اجزا بھی مختلف ہوتے ہیں۔

کھجور عام طور پر تین مراحل میں تیار ہوتی ہے۔ اور ان تینوں مراحل میں سے ہر ایک کی مخصوص غذائی خصوصیات ہوتی ہیں۔

بسر یا بلح

فائبر اور ٹینن سے بھرپور ہوتی ہیں، جبکہ اس مرحلے میں زیادہ تر قسموں میں مٹھاس کھجور کے اگلے مراحل کے مقابلے میں کم ہوتی ہے، مگر یہ نمی سے بھرپور ہوتی ہے اس لیے گرم اور معتدل موسم میں کھانے کے لیے موزوں ہے۔

رطب اور تمر

رطب کھجور کا تازہ پھل ہے، جب کھجور مکمل طور پر پک جاتی ہے، اور خشک کرنے یا محفوظ کرنے کے لیے تیار ہو جاتی ہے۔

اس مرحلے کے دوران یا جب پھل مکمل طور پر پک جاتا ہے تو نمی کم ہو جاتی ہے اور شکر کی مقدار بڑھ جاتی ہے، اس لیے اس مرحلے پر کھجور کھانا سرد موسم کے لیے موزوں ہے کیونکہ اس میں کیلوریز کی زیادہ مقدار ہوتی ہے، اور گرم آب و ہوا. کے لیے موزوں نہیں ہے۔

ہر قسم کے اپنے فائدے، استعمال اور موزوں اوقات ہوتے ہیں۔ تازہ کھجوریں غذائیت کے لحاظ سے بہتر ہیں، کیونکہ کھجوریں ذخیرہ کرنے اور تیاری کے طریقوں سے کچھ غذائی اجزاء کھو دیتی ہیں۔

سعودی عرب میں کھجور کا پھل
سعودی عرب میں کھجور کا پھل

کھجور میں کاربوہائیڈریٹس اور فائبر کی مقدار بہت زیادہ ہوتی ہے، یہ ان لوگوں کے لیے موزوں ہے جنہیں زیادہ کیلوریز یا زیادہ توانائی کی ضرورت ہوتی ہے۔

تمر کے مقابلے رطب میں کیلوریز کم ہوتی ہیں، مثال کے طور پر (100 گرام) کھجور میں 284 کیلوریز ہوتی ہیں، جب کہ رطب میں 124 کیلوریز ہوتی ہیں۔

کھجور میں 2.8 گرام پروٹین، 1 گرام تیل اور 37 گرام کاربوہائیڈریٹ ہوتے ہیں، جب کہ 1.8 گرام پروٹین، 0.6 آئل، 76 گرام کاربوہائیڈریٹس اور 5 گرام فائبر ہوتا ہے اور یہ ہاضمے ، بلڈ شوگر کو کنٹرول کرنے، اور کولیسٹرول کو کم کرنے میں مدد دیتی ہے۔

مائیکرو نیوٹرینٹس کے لحاظ سے، تمر کھجور میں کیلشیم (84 ملی گرام فی سرونگ) اور آئرن (8 ملی گرام) رطب کے مقابلے میں زیادہ ہوتا ہے جن میں (34 ملی گرام) کیلشیم اور (6 ملی گرام) آئرن ہوتا ہے۔

تاہم، رطب میں وٹامن سی موجود ہوتا ہے، جو کہ تمر میں مکمل طور پر نہیں پایا جاتا، کیونکہ یہ محفوظ کرنے کے عمل کی وجہ سے ضائع ہو جاتا ہے۔

رطب دل اور شریانوں اور ہائی بلڈ پریشر کے مریضوں کے لیے بہتر ہے کیونکہ اس میں سوڈیم کی کمی کے ساتھ مناسب غذائیت موجود ہوتی ہے۔

کھجوروں کی اقسام

ماضی میں صفری، خضری، مسکانی اور خصاب کی اقسام بہترین اقسام میں سے تھیں ، بلکہ جس کے پاس سلج اور نبوت سیف ہوتی تو سمجھا جاتا کہ اس کے پاس نایاب ترین کھجوریں ہیں۔

اب ان میں سے زیادہ تر انواع معدوم ہو چکی ہیں، سوائے چند ایک کے۔ جیسے" صقعی" مخصوص ذائقے اور محفوظ کرنے میں آسانی کی وجہ سے اپنی حیثیت برقرار رکھے ہوئے ہے۔

سعودع عرب میں کھجور کی بہت سی انواع اگائی جاتی ہیں، بعض علاقوں کی کچھ اقسام دوسروں کے مقابلے میں زیادہ مشہور ہیں۔

سعودی عرب میں پائی جانے والی کھجوروں کی اقسام
سعودی عرب میں پائی جانے والی کھجوروں کی اقسام

مثلاً قصیم کی سقری، صقعی، اور "نبتہ علی" کافی مشہور ہیں۔ مدینہ کی عجوہ، عنبرہ، البرنی اورروثان کھجوریں بے حد پسند کی جاتی ہیں۔ الاحساء کھجور کی اقسام خلاص، رزیز اور شیشی کے لیے مشہور ہے۔

الخرج اور اس کے آس پاس کے علاقوں کی، خشرم، صقعی، خلاص، الخضری، الصفری، اور نبوت سیف اقسام مشہور ہیں۔ بیشہ اور حائل کی صفری کھجوریں بہت پسند کی جاتی ہیں۔

ایک ہی قسم کی کیمیائی ساخت ایک خطے سے دوسرے خطہ میں مختلف ہوتی ہے، مثلاً الخرج کی خلاص الاحساء کی خلاص سے مختلف ہے، اسی طرح اشیقر اور شقراء کی خلاص ایک دوسرے سے مختلف ہوتی ہے۔

اس کے علاوہ سعودی عرب میں کھجور کی بعض نئی قسمیں بھی پیدا کی جا رہی ہیں۔ یہ دنیا بھر میں کھجوروں کی پیداوار میں سب سے بڑا ملک ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں