اسرائیل ۔ حماس کے درمیان ویڈیوز کی جنگ؛ صہیونی لغویات کا تڑکہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سات اکتوبر سے جاری شدید لڑائی کے ساتھ ساتھ حماس اور اسرائیل کے درمیان ایک اور قسم کی جنگ بھی جاری ہے۔

حماس ویڈیو

کئی مبصرین کی رائے ہے کہ گذشتہ چار ہفتوں سے دونوں فریق معلومات وار فیئر پروپیگنڈا پر اپنی توجہ مرکوز کیے ہوئے ہیں۔

حماس کا عسکری بازو القسام بریگیڈز اسرائیلی فوج کے خلاف اپنی فوجی کارروائیوں کی ترویجی ویڈیوز تسلسل کے ساتھ نشر کر رہا ہے۔

اسرائیلی انتباہ

اسرائیل نے بھی جوابی اقدام کے طور پر ایسا ہی طریقہ کار زیادہ شدت سے اپنا رکھا ہے۔ اسرائیل سوشل نیٹ ورکنگ سائٹس پر اپنے تمام اکاؤنٹس کو غزہ کے محاذ جنگ پر ہونے والی مدبھڑ کی ویڈیوز کو نشر کرنے کے لیے بروئے کار لا رہا ہے۔

گذشتہ روز دونوں فریقوں نے غزہ کی پٹی میں ان کے بقول شدید ترین لڑائی کے ویڈیو کلپس نشر کیے۔

توہین آمیز گالم گلوچ

ان ویڈیوز میں اسرائیل کے بصری لوازمہ کے ساتھ حماس کو مخاطب کرتے ہوئے توہین آمیز اور گالم گلوچ پر مبنی زبان کا استعمال معمول کی بات ہے۔

تنقید کی آڑ میں اسرائیلی پیش کار حماس کو ’’جانور‘‘ اور بسا اوقات ’’کتے‘‘، داعش وغیرہ جیسے ناپسندیدہ القابات سے نوازتے رہتے ہیں۔

عرب دنیا کے لئے اسرائیلی وزیر اعظم کے ترجمان عوفر جنڈلمین نے گذشتہ شام ایک ویڈیو شیئر کی، جس میں ان کے بقول اسرائیلی فوج کی طرف سے حماس کی سرنگوں میں کتے چھوڑنے کا منظر فلمایا گیا تھا۔

اس ویڈیو پر اپنے تبصرے میں وزیر اعظم کا نفس ناطقہ لکھتا ہے کہ ’’کتے، حماس کے کتوں کا فتح کا پپچھا کرتے رہیں گے۔‘‘

کئی تجزیہ نگار سمجھتے ہیں کہ مخالفین کو جنگ کے دوران ایسی خصوصیات کے حوالے یاد کرنے کا مقصد ان کی قدر ومنزلت کم کرنا ہوتا ہے تاکہ انہیں نقصان پہنچا کر بڑے پیمانے پر ہلاک کرنے کا جواز میسر آ سکے۔

فلسطینی تنظیموں اور اسرائیل کے درمیان جنگ کے حالیہ مرحلے سے یہ بات ظاہر ہوتی ہے کہ اسرائیلی حکومت اور فوج پبلک ریلیشنز کے میدان میں دنیا کی مضبوط ترین آپریشنل مشین کو بروئے کار لا رہی ہے۔

اس امر کی اہمیت اس لیے بھی بڑھ جاتی ہے کہ فلسطینیوں کے خلاف اسرائیلی پالیسی پر دنیا بھر میں شدید تنقید کی جاتی ہے اور صہیونی حکومت اس کی عادی ہو چکی ہے۔

اسی تناظر میں سکائی نیوز کے چیف رپورٹر سٹوارت زمزے نے حال ہی شائع ہونے تجزیے میں اس امر کی تصدیق کی ہے کہ اسرائیل اور حماس دونوں فریق ایام جنگ میں معلومات اور بیانیے کی اہمیت جان چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں