ایران: ویمن فٹبال ٹیم میں مردوں کی نشاندہی پر چار کھلاڑی فارغ

جنس کی مکمل تبدیلی کے بعد نکالے گئے کھلاڑیوں کی واپسی متوقع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران کی فٹبال فیڈریشن نے خواتین کی قومی ٹیم میں شامل چار مردوں کی نشاندہی کے بعد انہیں ٹیم سے خارج کر دیا ہے۔ یہ فیصلہ اس وقت کیا گیا جب پتہ چلا کہ خواتین کی ٹیم میں چار مرد بھی شامل ہیں جو اپنی جنس تبدیل کرانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

ایرانی اخبار"میرور" کی رپورٹ کے مطابق قومی فٹبال ٹیم میں خواتین اتھلیٹس کی شمولیت سے قبل ان کی زنانہ جنس کو یقینی بنایا جاتا رہا ہے لیکن یہ امر حیران کن ہے کہ مرد کس طرح خواتین کی ٹیم میں در آئے ہیں۔ تاہم اس واقعے کے بعد کسی بھی نئی شامل ہونے والی خاتون کھلاڑی کو جنس کے حوالے سے اپنے صنف نازک ہونے کی مکمل معلومات فراہم کرنا اور تصدیق کرانا ہو گی۔

رپورٹ کے مطابق جب یہ عقدہ کھلا کہ خواتین کی ٹیم میں لڑکیوں کے بھیس میں مرد کھلاڑی بھی موجود ہیں تو فٹبال فیڈریشن کی جانب سے تفتیش شروع کی گئی۔ تفتیش کے دوران معلوم ہوا کہ قومی ٹیم میں چار مرد شامل ہیں تاہم وہ اپنی جنس کی تبدیلی کے مرحلے سے گذر رہے ہیں۔

درایں اثناء ایرانی فٹبال فیڈریشن کی میڈیکل کمیٹی کے سربراہ احمد ھاشمیان کا کہنا ہے کہ جنس کی تبدیلی کے تمام مراحل مکمل ہونے کے بعد ٹیم سے نکالی گئی کھلاڑیوں کو دوبارہ شامل کیا جا سکتا ہے کیونکہ جنس کی تبدیلی کے بعد ان کی مردانہ صفات ختم ہو جائیں گی اور وہ ویمن ٹیم کا حصہ بننے کی شرائط پر پورا اتریں گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں