.

برطانیہ: 10 ہزار شامی باغیوں کیلیے تربیتی منصوبے کا انکشاف

خطرناک منصوبے پر عمل ترکی اور اردن کی مدد سے کیا جانا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بشار الاسد کو شکست دینے کی خاطر دس ہزارشامی باغیوں کو تربیت دینے اور مسلح کرنے کے برطانیہ کے خفیہ منصوبے کا انکشاف سامنے آیا ہے۔ تاہم بعد ازاں اس منصوبے کو خطرناک سمجھتے ہوئے ڈراپ کر دیا گیا ۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق برطانیہ کی طرف سے یہ مبینہ منصوبہ دو سال پہلے اس وقت کے وزیر دفاع ڈیوڈ رچرڈ نے پیش کیا تھا۔ اس تجویز پر وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون کے علاوہ برطانوی قومی سلامتی کونسل اور امریکی حکام نے بھی غور کیا تھا۔

ڈیوڈ رچرڈ کی تجویز کے حصے کے طور پر اعتدال پسند باغیوں کو ترکی اور اردن کے تربیتی مراکز میں تربیت دی جانا تھی۔

واضح رہے اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ ایک کروڑ اسی لاکھ شامی عوام کو مدد کی ضرورت ہے۔ ان میں سے ساڑھے سنتالیس لاکھ لوگ ایسے علاقوں میں رہتے ہیں جن تک پہنچ بہت مشکل ہے۔ جبکہ تیس لاکھ کو تین برسوں کے دوران دو سرے ملکوں میں نقل مکانی کرنی پڑی ہے۔

اس وقت ایک اندازے کے مطابق تقریبا چار سو برطانوی شہری شام میں جنگجووں کی صورت موجود ہیں۔ دیگر مغربی ممالک کے شہری بھی سینکڑوں کی تعداد میں بشار رجیم کے خلاف لڑرہے ہیں۔