یمن سے حملے میں سعودی بارڈر فورس کااعلیٰ افسر اور اہلکار شہید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن کے شمالی علاقے سے سعودی عرب کے سرحدی علاقے کی جانب شدید فائرنگ اور بارودی سرنگ کے دھماکے میں سکیورٹی فورسز کا ایک اعلیٰ افسر اور ایک اہلکار شہید ہوگیا ہے۔

سعودی وزارت داخلہ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ سرحدی ضلع جازان بارودی سرنگ کے دھماکے میں سکیورٹی فورسز کی ایک گاڑی تباہ ہوگئی ہے جس کے نتیجے میں کرنل حسن غشوم عقیل اور ڈپٹی سارجنٹ عبدالرحمان محمد آل حزازی شہید اور چار سرحدی محافظ زخمی ہوگئے ہیں۔

وزارت داخلہ کے ترجمان میجرجنرل منصورالترکی نے ہفتے کے روز ایک بیان میں بتایا ہے کہ یہ واقعہ جمعہ کی شام چھے بجے کے لگ بھگ پیش آیا تھا اور گشت پر مامور سرحدی محافظوں کی گاڑی بارودی سرنگ کے دھماکے میں تباہ ہوگئی تھی۔

اس کے بعد مزید سرحدی محافظ جب جائے وقوعہ پر پہنچے تو یمنی علاقے سے ان پر مختلف اطراف سے شدید فائرنگ شروع کردی گئی۔اس کے بعد یمنی محافظوں اور یمنی علاقے میں موجود حملہ آوروں کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ ہوا ہے۔

سعودی عرب گذشتہ چھے ماہ سے ایران کے حمایت یافتہ حوثی باغیوں کے خلاف یمن میں جنگ آزما ہے۔سعودی عرب کی قیادت میں عرب اتحاد کے لڑاکا طیارے یمن میں حوثی شیعہ باغیوں کے ٹھکانوں پر فضائی حملے کررہے ہیں جبکہ یمن کے شمالی علاقے میں موجود حوثی باغی سرحد پار سعودی آبادی اور سکیورٹی فورسز کی جانب گولہ باری کرتے رہتے ہیں۔

دونوں ملکوں کے مابین سرحدی علاقےمیں حوثیوں کے ساتھ جھڑپوں یا ان کے حملوں میں بیسیوں سعودی فوجی اور افسر شہید ہوچکے ہیں۔سعودی فوج کے ایک جنرل گذشتہ ماہ حوثیوں کے ساتھ لڑائی میں شہید ہوگئے تھے۔

ادھر یمن میں اس وقت وسطی صوبے مآرب اور جنوب مغربی شہر تعز میں صدر عبد ربہ منصور ہادی کی وفادار فورسز اور حوثی باغیوں کے درمیان لڑائی جاری ہے۔ مقامی یمنیوں کا کہنا ہے کہ ان دونوں محاذوں پر متحارب فورسز کے درمیان بھاری گولہ باری کا تبادلہ ہورہا ہے۔

درایں اثناء سعودی عرب کی قیادت میں اتحادی ممالک کے لڑاکا طیاروں نے یمن کے پانچ صوبوں اور دارالحکومت صنعا میں حوثیوں اور ان کی اتحادی ملیشیاؤں کے ٹھکانوں پر بمباری کی ہے۔تاہم ان فضائی حملوں میں ہونے والے جانی نقصان کے بارے میں کوئی اطلاع نہیں ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں