سلطان سلیمان کی قبر ہنگری میں دریافت!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ہنگری کے ماہرین نے دعویٰ کیا ہے کہ کھدائیوں کے دوران انہیں ایک قبر ملی ہے جہاں سے ملنے والی باقیات تُرکی کی عثمانی خلافت کے جد امجد سلطان سلیمان القانونی کی ہو سکتی ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ماہرین کا کہنا ہے کہ ایک قبر سے انہیں انسانی دل کی باقیات ملی ہیں جن پر ریسرچ جاری ہے۔ غالب امکان ہے کہ قبر سے ملنے والے اعضاء کی باقیات سلطان سلیمان خان ہی کی ہو سکتی ہیں۔

خیال رہے کہ ترک خلافت کے دبنگ بادشاہوں میں سلطان سلیمانی القانونی نے 46 سال وسیع وعریض سلطنت پر حکومت کی۔ وہ سنہ 1520ء میں تخت خلافت پر متمکن ہوئے اور ستمبر 1566ء کو اپنی وفات تک سلطنت کے طاقت ور بادشاہ رہے۔ ان ک ی وفات 71 سال کی عمرمیں کروشیا اور ہنگری کے درمیان ایک سرحدی علاقے میں ہوئی تھی۔ سلطان سلیمان القانونی کی وفات کے بعد بوڈا پسٹ کے جنوب میں 190 کلو میٹر دور ’’سیکٹورا قلعہ‘‘ ترک فوج نے گھیر لیا تھا۔

انسانی باقیات پر تحقیق کرنے والے ماہرین کا کہنا ہے کہ انہیں یقین ہے کہ قبر سے ملنے والے اعضاء سلیمان القانونی ہی کے ہیں تاہم موسم سرما کی وجہ سے تحقیقات کا عمل روک دیا گیا ہے۔ آئندہ موسم بہار میں تحقیقات دوبارہ شروع کی جائیں گی۔

خیال رہے کہ ترک خلیفہ سلطان سلیمان خان کی وفات کے بعد ان کے جسم سے دل اور بعض دوسرے اعضاء نکال لیے گئے تھے اور انہیں جائے وفات پر دفنایا گیا تھا جب کہ بقیہ میت قسطنطنیہ منتقل کر دی گئی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں