شامی انٹیلی جنس پرلبنان میں مساجد میں بم دھماکوں کا الزام

طرابلس کی مساجد میں دھماکوں میں ملوث عناصرکے خلاف کارروائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لبنان کی ایک عدالت نے طرابلس شہر کی دو جامع مساجد مسجد التقویٰ اور مسجد السلام میں چند ماہ قبل ہونے والے بم دھماکوں کی ذمہ داری شام کے انٹیلی جنس اداروں پر عاید کرتے ہوئے ملزمان کے خلاف باضابطہ قانونی کارروائی کا آغاز کردیا ہے۔

العربیہ ٹی وی کے مطابق لبنانی عدالت کی طرف سے جاری کردہ فیصلے میں قرار دیا گیا ہے کہ طرابلس کی مسجد التقویٰ اور مسجد السلام میں بم دھماکوں کی منصوبہ بندی شامی انٹیلی جنس کی نگرانی اور ہدایت پرعمل میں لائی گئی۔ مساجد میں دھماکے شامی انٹیلی جنس کی فلسطینی برانچ سے وابستہ کیپٹن محمد علی علی اور پولیٹیکل سیکیورٹی برانچ کے ناصر جوبان کی نگرانی میں کیے گئے۔

لبنانی عدالت کی طرف سے نہ صرف شامی انٹیلی جنس کو مساجد میں دہشت گردی میں مورد الزام ٹھہرایا گیا ہے بلکہ مساجد میں دھماکوں میں ملوث شامی انٹیلی جنس اہلکاروں کا قانونی تعاقب کرنے اور سازش کے تانے بانے تیار کرنے میں ملوث دیگر عناصر کی نشاندہی کے بعد ان کے خلاف بھی قانونی چارہ جوئی کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

تحقیقات سے پتا چلا ہے کہ لبنان کے طرابلس شہر کی دو مساجد میں بم دھماکوں کی منصوبہ بندی شامی انٹیلی جنس میں اعلیٰ سطح پر کی گئی تھی جس پر نہایت راز داری میں عمل درآمد کیا گیا۔

خیال رہے کہ لبنانی پولیس نے ایک شامی شہری کو کچھ عرصہ قبل طرابلس سے حراست میں لیا تھا۔ دوران حراست اس نے مسجد التقویٰ اور مسجد السلام میں بم دھماکوں میں ملوث ہونے کا اعتراف کیا۔ یوسف دیاب نامی ملزم نے بتایا مساجد میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں ایک سیل ملوث ہے جس کے دیگر عناصر شام فرار ہوگئے تھے۔ یہ سیل شامی انٹیلی جنس کی نگرانی میں کام کرتا تھا جس کا مقصد لبنان میں اہل سنت کی مساجد میں دھماکے کرانا اور دہشت گردی کو ہوا دینا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں