.

اقوام متحدہ میں امریکی سفیر نِکّی ہیلی ایران کے خلاف ناقابل تردید شواہد پیش کریں گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ میں متعیّن امریکی سفیر نِکّی ہیلی ایران کی بین الاقوامی ذمے داریوں کی خلاف ورزیوں سے متعلق آج جمعرات کو ناقابل تردید شواہد پیش کررہی ہیں۔

امریکی مشن کے مطابق مس نِکّی ہیلی نیویارک میں ایک نیوز کانفرنس میں ایران کی مشرق وسطیٰ اور دنیا بھر میں عدم استحکام کی سرگرمیوں کے بارے میں ناقابل تردید شواہد پیش کررہی ہیں۔

امریکا اور سعودی عرب نے ایران پر یمن کے حوثی باغیوں کو ہتھیار مہیا کرنے کے الزامات عاید کیے ہیں۔حوثیوں نے 4 نومبر سعودی دارالحکومت الریاض کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کی جانب ایک میزائل فائر کیا تھا لیکن اس کو فضا ہی میں ناکارہ بنا دیا گیا تھا۔

اقوام متحدہ میں امریکی مشن کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق ’’ سفیر نِکّی ہیلی اس امر کے ناقابل تردید شواہد پیش کریں گی کہ ایران نے جان بوجھ کر اپنی بین الاقوامی ذمے داریوں سے انحراف کیا ہے اور پھر ان خلاف ورزیوں کو چھپانے کی ناکام کوشش کی ہے‘‘۔

نکی ہیلی نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ایران کے بارے میں سخت موقف اختیار کرے۔انھوں نے ایران پر یمن ، لبنان اور شام میں اسلحے کی فروخت کے غیر قانونی سودے طے کرنے کے الزامات عاید کیے ہیں۔

سلامتی کونسل میں پیش کردہ ایک خفیہ رپورٹ کے مطابق اقوام متحدہ کے حکام نے الریاض کی جانب داغے گئے میزائل کے ملبے کا جائزہ لیا ہے ۔اس سے اس کی ’’ مشترکہ اساس‘‘ کی تو نشان دہی ہوئی ہے لیکن وہ کسی حتمی نتیجے پر نہیں پہنچ سکے کہ آیا یہ میزائل ایران کے ایک سپلائیر کا مہیا کردہ اور ایرانی ساختہ ہی ہے۔

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوٹیریس کو پیش کردہ اس رپورٹ کے مطابق حکام ابھی تک فراہم کردہ معلومات کا جائزہ لے رہے ہیں۔اقوام متحدہ کے ماہرین کی ایک اور ٹیم نے گذشتہ ماہ الریاض میں یمن سے فائر کیے گئے اس میزائل کے ٹکڑوں کا معائنہ کیا تھا اور انھیں اس میزئل کا ایران کے ایک مینوفیکچرر شاہد باقری انڈسٹریل گروپ سے ممکنہ تعلق کا سراغ ملا تھا اور اس گروپ کا لوگو میزائل کے ٹکڑوں پر کندہ پایا گیا تھا۔اقوام متحدہ نے اس گروپ کا نام اس کی پا بندیوں کی زد میں آنے والی ایرانی کمپنیوں اور اداروں میں شامل کررکھا ہے۔