.

ایران : اہواز میں احتجاجی مظاہرے جاری ، سکیورٹی فورسز کی ہوائی فائرنگ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کے شہر اہواز میں ہزاروں عرب شہریوں نے جمعرات کو دوسرے روز بھی حکومت کے خلاف احتجاجی مظاہرے کیے ہیں اور سکیورٹی فورسز نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے ہوائی فائرنگ کی ہے۔

ایرانی فورسز کے اہلکاروں کی ہوائی فائرنگ کرتے ہوئے انٹرنیٹ پر تصاویر اور وڈیوز پوسٹ کی گئی ہیں ۔اہواز سے تعلق رکھے والے انسانی حقوق کے ایک گروپ کا کہنا ہے کہ ہوائی فائرنگ سے کوئی شخص زخمی نہیں ہوا ہے لیکن ایک ویڈیو میں سکیورٹی فورسز کے اہلکار مظاہرین کو شہر کے مرکز کی طرف لے جانے کی کوشش کرتے ہوئے دیکھے جاسکتے ہیں ۔

ایک اور ویڈیو میں ایرانی فورسز کے اہلکار متعدد مظاہرین کو گرفتار کررہے ہیں ۔اہواز کے باسی مختلف شاہراہوں پر نکل کر احتجاج کررہے تھے ۔جب انھیں ایرانی فورسز نے منتشر کردیا تو وہ شہر کے قدیم بازار میں جمع ہو گئے اور وہاں احتجاجی مظاہرہ کرنے لگے ۔ شہر کے کارکنان نے اس بات کی بھی تصدیق کی ہے کہ ایرانی حکام نے سوشل میڈیا کے پلیٹ فارم ٹیلی گرام کو بند کردیا ہے تاکہ اہواز میں جاری مظاہروں پر قابو پایا جاسکے۔

اہواز میں یہ نئے مظاہرے ایران کے ایک قومی ٹیلی ویژن سے بچوں کا یک طرفہ شو نشر ہونے کےخلاف کیے جارہے ہیں ۔ایران کے نئے سال نوروز کے آغاز پر اس پروگرام میں اہواز کی عرب شناخت کو مکمل طور پر نظر انداز کردیا گیا تھا حالانکہ یہ عرب اکثریتی شہر ہے۔

احتجاج کرنے والے کارکنان کا کہنا ہے کہ حکومت جان بوجھ کر اہواز کے عربوں کے خلاف امتیازی ایجنڈے کا پروپیگنڈا کررہی ہے۔ وہ شہر میں آبادی کے تناسب کو تبدیل کرنے کے منصوبے پر عمل پیرا ہے اور وہ عربوں کی شناخت کو مسلسل نظر انداز کررہی ہے ۔

اہواز ایران کے دوسرے شہروں کے برعکس اپنی آبادی ، جغرافیے ، ثقافت ، زبان اور تاریخ کی خصوصیات کے اعتبار سے ہر لحاظ سے ایک عرب شہر ہے۔اس شہر کے مکینوں نے ’’میں عرب ہوں‘‘ کے ہیش ٹیگ سے سوشل میڈیا پر ان مظاہروں کی اپیل کی تھی۔

مظاہرین نے مذکورہ پروگرام نشر کرنے پر ایران کی ریڈیو اور ٹیلی ویژن کارپوریشن کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ یہ کارپوریشن ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کی براہ راست نگرانی میں کام کرتی ہے۔انھوں نے اس پروگرام کے ذمے داروں کے احتساب کا مطالبہ کیا ہے اور ان سے یہ بھی مطالبہ کیا ہے کہ وہ اہواز کے عرب عوام سے باضابطہ طور پر اس حرکت پر معافی مانگیں ۔